شہید فخری زادہ کے قتل میں صیہونیوں کے ملوث ہونے پر زبردست شواہد موجود ہیں: ایران

تہران، ارنا – ایرانی وزیر دفاع اور لاجسٹک نے اس بات پر زور دیا ہے کہ اس بات کے دلیل ثبوت موجود ہیں کہ شہید فخری زادہ کے قتل میں صہیونی وجود ملوث تھا۔

یہ بات بریگیڈیئر جنرل "امیرحاتمی" نے بدھ کے روز ڈاکٹر فخری زادہ کی شہادت کے موقع پر 60 سے زائد ممالک کے وزرائے دفاع کو لکھے گئے خط میں کہی۔
انہوں نے سائنسی اور تحقیقی شعبوں میں خاص طور پر کرونا وائرس سے نمٹنے کے لئے اوزاروں اور سازو سامان کی تیاریوں اور کامیابیوں کا حوالہ دیتے ہوئے ریاستی دہشت گردی سے نمٹنے کے لئے دوہرے رویے کو ترک کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ اس غیر قانونی ، مجرمانہ اور غیر انسانی حرکت کی مذمت کریں۔
جنرل حاتمی نے ایرانی سائنسدانوں کے قتل میں انٹیلیجنس خدمات خصوصا قابض صیہونیوں کے انٹیلی جنس آلات میں براہ راست مداخلت کی تاریخ کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس بات کے مجاز شواہد موجود ہیں کہ اس قتل میں ناجائز صہیونی ریاست ملوث تھی۔
انہوں نے کہا کہ اس جرم کو نظر انداز کرنے سے دنیا میں اس کی تکرار اور عدم تحفظ کا باعث بنتا ہے اور اس جرم کے منصوبہ سازوں اور قصورواروں کو سزا دینے کی ضرورت ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران کو اس کا جواب دینے کا حق محفوظ ہے۔
ایرانی وزیر دفاع نے بھی اس بات کی تصدیق کی کہ دہشت گردی اور تشدد کے خلاف جنگ کے لئے ریاستی دہشت گردی کا مقابلہ کرنے میں دوہری رویے کو ترک کرنا ہوگا، لہذا اسلامی جمہوریہ ایران ، دہشت گردی اور تشدد کا نشانہ بننے والے ایک فرد کی حیثیت سے ، گذشتہ چار دہائیوں کے دوران ہونے والی دہشت گردی کی کارروائیوں کے نتیجے میں 17 ہزار شہریوں اور اعلی عہدے داروں کو کھو چکا ہے ، اور ان کی مذمت کرتا ہے، عالمی برادری سے اس جرم کی مذمت کرنے کا مطالبہ کرتا ہے جو انسانی حقوق اور بین الاقوامی قانون کے بنیادی اصولوں اور اقوام متحدہ کے چارٹر میں درج اصولوں سے متصادم ہے۔
یہ بات قابل ذکر ہے ایران کے ایٹمی پروگرام کے بانی سائنسدان محسن فخری زادہ کو 27 نومبر میں تہران میں ایک دہشتگردانہ حملے میں شہید کر دیا گیا۔
ایران کے دارالحکومت تہران کے علاقے دماوند میں مسلح افراد نے ایرانی سائنسدان کی گاڑی پر حملہ کیا؛ حملہ آوروں نے ان کی گاڑی کے قریب دھماکا اور فائرنگ کی جس کے نتیجے میں سائنس دان محسن فخری زادہ شدید زخمی ہوگئے، اُنہیں قریبی اسپتال منتقل کیا گیا تاہم وہ جانبر نہ ہوسکے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
8 + 6 =