شہید سلیمانی کے قتل کے رد عمل کو خطے سے امریکی انخلا سمجھتے ہیں

تہران، ارنا- ایران کے صدراتی چیف آف اسٹاف نے کہا ہے کہ شہید سلیمانی ایک نہایت ذہین سفارتکار تھے اور ہم ان کے قتل اور اسلامی جمہوریہ ایران کی سرزمین پر جارحیت کی جوابی کاروائی کو خطے سے امریکہ کا مکمل انخلا سمجھتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار "محمود واعظی" نے لبنانی نیوز ایجنسی اور نور ریڈیو کیساتھ انٹرویو دیتے ہوئے کیا۔

انہوں نے جنرل سلیمانی کے قتل کے رد عمل پر ایران کی جوابی کاروائی سے متعلق کہا کہ ہم نے فوجی شعبے میں اس واقعے میں کردار ادا کرنے والے امریکی فوجی بیس کو میزائل حملوں کا نشانہ بنایا۔

ایران کے صدراتی چیف آف اسٹاف نے کہا کہ اس ٹارگٹڈ حملے نے امریکیوں کو یہ واضح پیغام بھیجا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کی سرزمین پر ہر کسی قسم کے حملے کا سنجیدہ رد عمل ہوگا تا ہم  جیسا کہ ہم نے بارہا کہا ہے جنرل سلیمانی کے قتل کا رد عمل خطے سے امریکہ کا مکمل انخلا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہماری پالیسی علاقے میں خطی ممالک ہی کے ذریعے قیام امن اور استحکام اور غیر خطی ممالک کی مداخلت کا مقابلہ کرنا ہے۔

واعظی نے کہا کہ اس حوالے سے ایرانی صدر کی تجویز کردہ ہرمز امن منصوبہ بھی میز پر ہے جن پر پڑوسی ملکوں کے تعاون سے عمل درآمد کیا جائے گا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 9 =