امریکی صدر اور وزیر خارجہ؛ شہید سلیمانی کے قتل کے ذمہ دار ہیں

تہران، ارنا – ایرانی صدر نے کہا کہ شہید سلیمانی کسی گروپ سے متعلق بلکہ وہ ایک قومی ہیرو اور ایران کے عوام ، خطے اور مسلم کی اقوام کے لئے باعث فخر ہے۔

یہ بات حسن روحانی نے بدھ کے روز کابینے کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نےعیسوی سال کے اختتام کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ کل ختم ہونے والے سال ہمیں ایک دکھ اور تکلیف کا سامنا ہیں اور پچھلے سال ہم نے امریکی صدر اور وزیر خارجہ سمیت امریکی عہدیداروں کے ذریعہ کیے گئے وحشیانہ حملے میں جنرل سلیمانی کی شہادت کو جو دونوں ہی اس جرم کے ذمہ دار ہیں۔
ایرانی حکومت کے صدر نے کہا کہ دوسروں بھی اس جرم میں ملوث ہیں۔ ہماری قوم ان سے باز نہیں آئے گی اور یہ ہمارے لوگوں کا حق ہے کہ وہ اپنے پیارے جنرل کے خون کا بدلہ لیں اور اپنے ناقابل تسخیر حقوق کا دفاع کریں۔

روحانی نے کہا کہ شہید سلیمانی کی شہادت اسلامی جمہوریہ اور خطے میں ممالک کی خودمختاری کے خلاف بدلہ تھی۔ سازشوں اور صیہونیت کے خلاف مقابلہ کرنے والےعظیم ممالک سے بدلہ لینا تھی۔

انہوں نے کہا کہ یمن ، شام ، عراق ، لبنان اور افغانستان میں بدامنی صیہونیوں کے سوا کسی کے مفاد میں نہیں ہے۔ بد امنی خطے کے تمام ممالک کے لیے نقصان دہ ہوگی۔ وہ شہید سلیمانی کا قتل کرکے ایک عظیم آدمی سے بدلہ لینا چاہتے تھے جبکہ وہ ایک بے مثال بہادر آدمی کے ساتھ ساتھ مدبر بھی تھا۔

یاد رہے کہ 3 جنوری 2020 عراق کے دارالحکومت بغداد کے ایئرپورٹ پر امریکی صدر کے براہ راست حکم کے بعد راکٹ حملے کیے گئے جس کے نتیجے میں پاسداران انقلاب کے کمانڈر قدس جنرل قاسم سلیمانی سمیت عراق کی عوامی رضاکار فورس الحشد الشعبی کے ڈپٹی کمانڈر "ابومهدی المهندس" شہید ہوگئے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha