روس کا توانائی اور تیل کے شعبے میں ایران سے تعاون بڑھانے کا مطالبہ

ماسکو، ارنا- روسی وزیر اعظم کے خصوصی معاون نے ایرانی وزیر تیل کیساتھ ایک ملاقات میں ایران سے توانائی بالخصوص تیل کے شعبے میں تعاون کے فروغ کا مطالبہ کیا۔

تفصیلات کے مطابق، روس کے دورے پر آئے ہوئے ایرانی وزیر تیل "بیژن نامدار زنگنہ" نے پیر کے روز روسی وزیر اعظم کے معاون خصوصی "الکساندر نوواک" سے ایک ملاقات میں اویپک اور اوپیک پلاس میں روس کے مثبت اور تعمیری کردار پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ توانائی کے شعبے میں دونوں ممالک کے درمیان تعاون میں اضافہ ہوتا جار رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حالیہ صورتحال اور ایران و روس کیخلاف عائد امریکی پابندیوں کے تناظر میں دونوں ملکوں کے درمیان تعاون کے فروغ کی انتہائی ضرورت اور اہمیت ہوتی ہے۔

زنگنہ نے حالہ سالوں کے دوران تیل اور توانائی کے شعبوں میں ایران اور روس کے درمیان قریبی تعاون پر تبصرہ کرتے ہوئے پابندیوں کے بُرے اثرات کو دور کرنے کیلئے باہمی تعاون کے فروغ کا مطالبہ کیا۔

ایرانی  وزیر تیل نے بین الاقوامی سطح پر ہونے والی تبدیلیوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ کسی بھی صورتحال میں ایران اور روس کے درمیان تعلقات میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی اور وہ پہلے سے کہیں زیادہ مضبوط رہیں گے۔

اس موقع پر روسی وزیر اعظم کے معاون خصوصی نے باہمی تعلقات میں اضافے پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بلا شبہ روس بھی توانائی اور تیل کے شعبوں میں ایران سے تعاون کے فروغ کا خواہاں ہے۔

نوواک نے اوپیک اور اوپیک پلاس تنظیموں میں روس کے تعمیری اور مثبت کردار پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ توانایی کے شعبے میں ایران اور روس کے تعاون کا سلسلہ جاری رہے گا۔

 اس کے علاوہ دونوں فریقین نے باہمی تعاون کے روڈ میپ کا جائزہ لیتے ہوئے توانائی کے شعبے میں طے پانے والے معاہدوں کے جلد از جلد نفاذ پر زور دیا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 2 =