انسانی حقوق کیخلاف ورزی پر ایران مخالف قرار داد جاری کرنا بین الاقوامی قوانین کے منافی ہے

تہران، ارنا- ایرانی پارلیمنٹ میں قائم کمیٹی برائے انسانی حقوق نے ایک بیان میں انسانی حقوق کیخلاف ورزی سے متعلق ایران کیخلاف قرارداد جاری کرنے کو بین الاقوامی قوانین کے منافی قرار دے دیا۔

اس کمیٹی نے اپنے بیان میں یورپی پارلیمنٹ کیجانب سے ایران کیخلاف امریکی معاشی جنگ کا ساتھ دینے کی تنقید کی۔

تفصیلات کے مطابق، خاتون "زہرہ الہیان" کی قیادت میں ایرانی پارلیمنٹ میں قائم کمیٹی برائے انسانی حقوق نے ایک جاری کردہ بیان میں یورپی پارلیمنٹ میں قائم کمیٹی برائے انسانی حقوق کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ جیسا کہ آپ جانتے ہیں، قوانین اور ضوابط کی تشکیل اور اس پر عمل درآمد، قانون اور روایتی اصولوں کے مطابق مجرموں کی جانچ؛ ملکوں اور ان کے اندرونی دائرہ اختیار کے ناگزیر حقوق میں شامل ہیں۔

اسی مناسبت سے اسلامی جمہوریہ ایران کے عدلیہ نے جرائم اور سزاؤں کی قانونی حیثیت اور منصفانہ مقدمے کی سماعت اور ملزم کے حقوق کے احترام کے اصولوں کے مطابق ملزموں کو سزا سنادی ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ حیرت کی بات ہے کہ یورپی پارلیمنٹ نے پارلیمانوں کے درمیان احترام پر مبنی اصولوں اور بین الاقوامی قوانین کیخلاف ورزی کرتے ہوئے انسانی حقوق کیخلاف ورزی کرنے سے متعلق ایران کیخلاف قرارداد کی منظوری دی ہے۔

 بیان میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران میں انسانی حقوق اور مجرموں کے معاملے سے متعلق یورپی پارلیمنٹ کا موقف سیاسی مقاصد کو آگے بڑھانے کے لئے انسانی حقوق کے اقدار کا غلط استعمال ہے جس کو آزاد ممالک کے نقطہ نظر سے کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ یورپی پارلیمنٹ جس نے ایرانی عوام کیخلاف امریکی معاشی دہشتگردی میں واشنگٹن کا ساتھ دیا ہے، خود واضح طور 80 ملین سے زائد ایرانی عوام بالخصوص خواتین، بچون اور بیماروں کے حقوق کیخلاف ورزی کر رہا ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha