غیرملکی ممالک کا ایرانی صوبے فارس میں سرمایہ کاری پر تیار

شیراز، ارنا- بعض غیر ملکی ممالک نے ایران کے جنوب مغرب میں واقع صوبے فارس میں سرمایہ کاری پر اپنی تیاری کا اظہار کرلیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار صوبے فارس کی خاتون عہدیدار "ہالہ فولاد فر" نے ہفتے کے روز علاقے کازروں میں تعمیراتی منصوبوں سے متعلق منعقدہ ایک اجلاس کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

منعقدہ اس اجلاس میں صوبے فارس کے عہدیداروں سمیت یورپی ممالک کے سرمایہ کار بھی شریک تھے۔

اس موقع پر فولادفر نے کہا کہ رواں سال کے دوران صوبے فارس میں 446 ملین ڈالر سے زائد غیر ملکی سرمایہ کاری کی گئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ صوبے فارس کو غیر ملکی سرمایہ کاری کے حصول میں ملک میں پہلی پوزیشن حاصل ہے۔

فولادفر کا کہنا ہے کہ اس صوبے میں سولار ریفائری اور صنعتی اور زراعتی شعبوں میں کئی اور بڑے منصوبوں کا غیر ملکی سرمایہ کاری سے نفاذ کیے جار رہے ہیں۔

اس اجلاس میں شریک فارس کے ڈپٹی گورنر جنرل نے کہا کہ علاقے کازروں میں فارس- بوشہر ریلوے منصوبے، فارس- خوزستان ریلوے لائن منصوبے، فارس- بوشہر فری وے منصوبے اور ایک کار ٹائر فیکٹری کی تعمیر وہ منصوبے ہیں جو سرمایہ کاری کیلئے تیار ہیں۔

دراین اثنا صوبے فارس کے نائب سربراہ برائے منصوبہ بندی کے امور نے کہا کہ فارس- خوزستان ریلوے لائن  529 کلومیٹر پر پھیلی ہوئی ہے جس پر غیر ملکی ممالک سرمایہ کاری کر سکتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس منصوبے کے نفاذ کیلئے 12 ہزار ارب تومان (ایرانی قومی کرنسی) کی ضرورت ہے جس کے 50 فیصد کو ایرانی وزرات تیل نے فراہم کرنے کا وعدہ دیا ہے۔

اس کے علاوہ  صوبے فارس کی تنظیم برائے تجارت، صنعت اور کان کنی کے امور کے نائب سربراہ نے کہا کہ کار ٹائر فیکٹری کے نفاذ سے ملک میں سالانہ 2 ملین 200 ہزار ٹائر رنگ کی ضروریات پوری ہوں گی اور اس منصوبے کیلئے 250 ارب تومان ( ایرانی قومی کرنسی) کی ضرورت ہے۔

اس اجلاس میں شریک غیر ملکی سرمایہ کاروں نے علاقے کازروں کی تاریخی مقامات کی از سر نو تعمیر سمیت ریلوے لائن منصوبوں پرسرمایہ کاری میں اپنی دلچسبی کا اظہار کرلیا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha