15 دسمبر، 2020 12:44 PM
Journalist ID: 2392
News Code: 84148003
0 Persons
سمندری پرجاتیوں کی شناخت میں ایران کی عالمی موجودگی

تہران، ارنا - نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف اوشیانوگرافی اور ماحولیاتی سائنسز کے فیکلٹی ممبر نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران میرین بایوڈائیویورسی پروسیسنگ سسٹم (او بی آئی ایس) میں سرگرم ممالک میں سے ایک ہے اور اب تک بہت سارے سمندری پرجاتیوں کو ریکارڈ کرنے میں کامیاب رہا ہے۔

ایران ایک ایسا ملک ہے جو زمین اور سمندر میں جینیاتی وسائل سے مالا مال ہے اور ماہرین کے مطابق ، دنیا اور ایران دونوں ہی میں پرتویواسی اقسام کی نشاندہی پر بہت سارے کام ہیں مگر سمندروں میں اس سرگرمی نے زمین کے ساتھ کوئی عمل برقرار نہیں رکھا ہے۔
اگرچہ سمندری پرجاتیوں کو جاننے کی اہمیت زمینی پرجاتیوں سے کم نہیں ہے لیکن کچھ محققین سمندری پرجاتیوں کو پرتویواسی نوع سے زیادہ اہم سمجھتے ہیں۔
ہمارا ملک شمال اور جنوب سے بالترتیب بحیرہ کیسپین ، خلیج فارس اور بحیرہ عرب کے وسیع تر پانیوں کے درمیان واقع ہے اور اس مسئلے نے ایران کو ایک اصولی اور علمی سمندری مبنی ملک بنا دیا ہے۔
عبدالوہاب مقصود لو نے بتایا کہ کچھ مطالعات کے مطابق اندازہ لگایا گیا ہے کہ خلیج فارس اور بحیرہ عرب کے ایرانی آبی ذخائر میں تقریبا 1،400 پرجاتیوں ہوں گی لیکن انہوں نے 3،300 سے زیادہ انواع کی نشاندہی کی ہے جن میں سے سبھی ان پانیوں میں جائز ہیں۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 5 =