10 دسمبر، 2020 11:48 AM
Journalist ID: 2392
News Code: 84142152
0 Persons
امریکہ کی جوہری معاہدے پر واپسی کیلئے تیار ہیں: ظریف

تہران، ارنا – ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ امریکہ کو جوہری معاہدے پر واپس آنا ہوگا اور اس معاہدے کا رکن بننے کے لئے کوشش کرنا چاہیئے۔

یہ بات "محمد جواد ظریف" نے جمعرات کے روز یو ٹیوب پر ارمان میڈیا مصنوبے کے ساتھ  انٹرویو دیتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہا کہ ہم امریکہ کو عالمی جوہری معاہدے پر واپسی کے لئے تیار ہیں جہاں سے وہ 2018 میں یکطرفہ طور پر پیچھے ہٹ گیا۔

ظریف نے کہا کہ اگر امریکہ اپنے وعدے پورے کرنے پر قائم ہے تو 2015 کے جوہری معاہدے کے کا رکن بننے کی کوشش کرنا چاہیئے۔

انہوں نے جوہری معاہدے کو اسلامی جمہوریہ ایران اور چھ عالمی طاقتوں ، امریکہ ، برطانیہ ، فرانس ، روس ، چین اور جرمنی کے درمیان طے پانے والا قانونی معاہدہ قرار دیا جس کی تصدیق اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 سے ہوئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ 104 صفحات پر مشتمل اس تاریخی معاہدے مستحکم ہے کیونکہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنے چار سالہ صدارتی دوران میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں ایران کی مذمت نہیں کرسکا۔
ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ٹرمپ کو وائٹ ہاؤس چھوڑنا ہے کیونکہ وہ 3 نومبر کو امریکہ میں ہونے والے صدارتی انتخابات میں کامیابی حاصل نہیں کرسکے اور ان کے حریف جو بائیڈن 20 جنوری 2021 تک آئندہ امریکی صدر ہوں گے۔
انہوں نے کہا کہ بہت سارے ماہرین کا خیال ہے کہ جوہری معاہدہ امریکہ اور اسرائیل کو متعارف کروانے کے بعد ایران اور سلامتی کے لئے خطرے کے طور پر حاصل کردہ ایک بہت بڑی کامیابی ہے۔
انہوں نے نئے صدارتی دوران امریکی پالیسیوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ بائیڈن انتظامیہ کے ارکان جانتے ہیں کہ جب وہ جوہری معاہدے پر واپس آجاتے ہیں تو اسلامی جمہوریہ ایران کے میزائل پروگرام سمیت کچھ مسائل پر بات چیت نہیں کی جاسکتی ہے کیونکہ ان پر پہلے ہی بات چیت ہوچکی ہے۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے مستقبل پر مایوسی کا شکار نہیں ہے۔
انہوں نے ناجائز صہیونی ریاست کی اختیار کردہ پالیسیوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ وہ اپنے خاتمے کی طرف پر گامزن ہے۔
انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران اسرائیل کو سرکاری طور پر تسلیم نہیں کرے گا تاہم اگر فلسطین اسرائیل کے ساتھ معاہدہ کرنے کا فیصلہ کرتا ہے تو ایران کو اس مسئلے سے کوئی مسئلہ نہیں ہے۔
ظریف نے اس بات پر زور دیا کہ فلسطین کا واحد حل جمہوری طریقہ ہے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
6 + 0 =