پابندیوں نے ادویات اور طبی سامان کی فراہمی کا نشانہ بنایا ہے: ایرانی وزیر صحت

نیویارک، ارنا- ایرانی وزیر صحت نے اقوام متحدہ میں کوویڈ- 19 کی روک تھام سے متعلق منعقدہ ایک اجلاس کے دوران کہا ہے کہ یکطرفہ پابندیوں نے ایرانی قوم کیلئے ضروری ادویات اور طبی سامان کی فراہمی کا نشانہ بنایا ہے۔

ڈاکٹر سعید نمکی نے مزید کہا کہ کورونا وبا کے پھیلاؤ کے ابتدا ہی سے ہم نے قائد اسلامی انقلاب کی حمایت اور صدر ممکلت کی ہدایت سے قائم کی گئی کورونا روک تھام کمیٹی میں "پوری حکومت ، پورا معاشرہ" کا رویہ اپناتے ہوئے اس وبا کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے تمام صلاحتیوں کو بروئے لایا ہے۔

انہوں نےکہا کہ یکطرفہ اور غیر قانونی پابندیوں کی وجہ سے رونما ہونے والی معاشی بدحالی کی وجہ سے ہم نے غریب گھرانوں کی مالی مدد اور چھوٹی کار و باریوں کی معاشی حمایت کرنے کے علاوہ ایران میں مقیم 5۔3 ملین قانونی اور غیر قانونی افغان تارکین وطن کیلئے مفت ٹسٹ اور علاج کی خدمات کی فراہمی کی۔

نمکی نے ایران کیخلاف امریکی معاشی دہشتگردی پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکی پابندیوں نے ایران میں کورونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کو بہت بڑے مسائل کا شکار کیا ہے اور ایرانی عوام کو ادویات اور ضروری طبی ساز و سامان تک رسائی کو مشکل بنادیا ہے جس کی وجہ سے ایرانی عوام کی جان خطرے میں ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ زر مبادلہ کے وسائل پر شدید پابندی کی وجہ سے حتی کہ انسانہ دوستانہ مسائل کیلئے ادویات اور صحت کی مصنوعات کی فراہمی کو شدید مشکلات کا شکار ہے۔

نمکی نے کہا کہ کورونا وبا نے ہمیں اس بات کی یاد دہانی کرائی کہ علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر یکجہتی اور تعاون کی شدید ضرورت ہے؛ اگرچہ ہم اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی قراردادوں اور وبائی اور غیر وبایی بیماریوں سے متعلق سیاسی اعلامیے کے پابند ہیں لیکن ہمارے مقاصد، بجٹ اور طریقوں پر نظر ثانی کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے بین الاقوامی تنظیموں سے مطالبہ کیا کہ وہ اس حوالے سے بغیر سیاسی رکاوٹ کے اقوام متحدہ کے ارکین کی بڑے پیمانے پر مالی حمایت کریں۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
8 + 10 =