یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ نے ایرانی سائنسدان کے قتل کو مجرمانہ فعل قرار دے دیا

لندن، ارنا- یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ نے جوہری اور دفاعی شعبے میں اعلی ایرانی سائنسدان شہید محسن فخری زادہ کے قتل کی تنقید کرتے ہوئے اسے مجرمانہ فعل قرار دے دیا۔

ان خیالات کا اظہار "چوسب بورل" نے منگل کے روز یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی تبدیلیوں سے متعلق منعقدہ گول میز کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ یہ مسائل کے حل کا طریقہ نہیں ہے اور ایرانی ماہرین کے قتل سے اس کی جوہری پروگرام کو روکا نہیں جا سکتا۔

بورل نے حادثے میں ملوثین اور کردار ادا کرنے والوں پر بات کیے بغیر کہا کہ بعض ممالک جوہری معاہدے کی بحالی کے خواہاں نہیں ہیں جبکہ اس معاہدے سے امریکی علیحدگی کے باجود ہم نے جوہری معاہدے کو زندہ رکھنے کی کوشش کی۔

انہوں نے اس امید کا اظہار کردیا کہ ایران کیخلاف امریکی پابندیوں کی منسوخی سے جوہری معاہدے کی بحالی ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ ایران جوہری معاہدہ کا رکن ہے لیکن اسے اپنے جوہری وعدوں پر بھر پور طریقے سے عمل کرنا ہوگا اور یہ اس وقت ممکن ہوگا جب ایران بھی جوہری معاہدے کے معاشی ثمرات سے مستفید ہوجائے۔

واضح رہے کہ یورپی یونین نے پیر کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ جوہری معاہدے کے مشترکہ کمیشن کا اگلا اجلاس 16 دسمبر میں رکن ممالک کی محکمہ خارجہ کے سیاسی ڈائریکٹرز کی سطح پر انعقاد کیا جائے گا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha