عراقی عوام کے عزم اور سلامتی کی حمایت کرنا ایران کی پائیدار پالیسی ہے: ایرانی ایڈمیرل

تہران، ارنا - ایران کی اعلی قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹری جنرل نے اس بات پر زور دیا کہ عراقی عوام کے عزم اور سلامتی کی حمایت کرنا ایران کی پائیدار پالیسی ہے۔

یہ بات علی شمخانی نے آج بروز اتوار تہران کے دورے پر آئے ہوئے عراقی وزیر دفاع کے 'جمعہ عناد سعدون' کے ساتھ ملاقات کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے اس ملاقات کے دوران باہمی، بین الاقوامی اور علاقائی تعلقات کو فروغ دینے پر تبادلہ خیال کیا۔

شمخانی نے کہا کہ ایران اور عراق کا دفاعی اور سلامتی تعاون استحکام اور سلامتی کو یقینی بناتا ہے اور ان تعلقات کو اسٹریٹجک سطح تک بڑھانا ہوگا۔

اس ملاقات میں ایڈمرل شمخانی نے عراقی شہروں کو داعش کے قبضے سے بچانے کے لئے اسلامی جمہوریہ ایران کی بھرپور حمایت اور خطے میں امریکہ اور ان کے اتحادیوں کی حمایت یافتہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ایران اور عراق کے مابین اچھے اور موثر دفاعی اور سلامتی تعاون کا ذکر کیا۔

مغربی ایشین میں امریکی موجودگی کا مقصد خطے کے ممالک کے مابین تنازعہ پیدا کرنا ہے انہوں نے اس مذموم سازش کا مقابلہ کرنے کے لئے خطے کے تمام ممالک کی ہوشیاری کی ضرورت پر زور دیا۔

انہوں نے دونوں ممالک کی سرحدوں کی سلامتی کو انتہائی اہم قرار دیتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران عدم تحفظ کے کسی بھی اقدام جو دونوں ممالک کے عوام کے امن کو خراب کرنا چاہتا ہے، کے خلاف مقابلہ کرے گا۔

اس اجلاس میں عراقی وزیر دفاع نے عراق میں دہشت گردی کے خاتمے میں اسلامی جمہوریہ ایران کی حمایت کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ ایران-عراق کے درمیان فوجی اور سیکورٹی کے تعلقات کو وسعت دینے پر زور دیا۔

عراقی وزیر نے کہا کہ کوئی تیسرا ایران اور عراق کے درمیان روابط پر اثرانداز نہیں ہوسکتا. داعش کے خلاف جنگ میں دونوں ممالک کے تجربات سے ظاہر ہوتا ہے کہ مشترکہ تعاون کے ذریعے بحرانوں پر قابو پایا جاسکتا ہے اور دونوں ممالک کے عوام کی فلاح و بہبود اور امن کے لئے دوسرے شعبوں میں تعاون کے مناسب مواقع پیدا کیے جاسکتے ہیں۔

 قابل ذکر ہے کہ ایرانی مسلح افواج کے سربراہ 'جنرل باقری' ایران کے دورے پر آئے ہوئے عراقی وزیر دفاع 'کے ساتھ ملاقات کی ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 10 =