پاکستان کیساتھ اقتصادی تبادلات کو بڑھانا پہلی ترجیح ہے: ایران

زاہدان، ارنا - پاکستان سے ملحقہ ایران کے سرحدی صوبے مشرقی سیستان و بلوچستان کے روڈ اینڈ ٹرانسپورٹیشن ادارہ کے سربراہ نے کہا ہے کہ ہمارے دوست ملک پاکستان کے ساتھ سرحدی علاقوں میں اقتصادی تبادلات کو بڑھانا پہلی ترجیح ہے۔

یہ بات "ایوب کرد" نے پیر کے روز دورے پاکستان کے موقع پر ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے پاکستانی صوبے بلوچستان کے ساتھ مشترکہ سرحدی تجارتی کمیشن کے آٹھویں اجلاس میں شرکت کے لئے پاکستان کا دورہ کیا۔
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ایرانی صوبے سیستان و بلوچستان پاکستان کے ساتھ سمندری اور زمینی سرحد ہونے کی وجہ سے ایک خصوصی اسٹریٹجک اور ٹرانزٹ پوزیشن کا حامل ہے جو قومی مفاد اور دونوں ممالک کے بہت سارے خطوں میں تجارتی اور معاشی تعلقات کو وسعت دیتی ہے۔
کرد نے کہا کہ ہمارے درمیان اقتصادی تبادلے کو وسعت دینے کے لئے اس اجلاس میں کرونا وائرس پھیلنے سے پہلے تجارتی سامان لے جانے والے ٹرکوں کی تعداد کو قبولیت میں اضافہ کرنے کی ضرورت پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔
انہوں نے کہا کہ تجارتی معاہدوں کا ایک سب سے اہم مقصد تجارت کی سہولت فراہم کرنا اور تاجروں اور سرمایہ کاروں کے لئے بوجھل قواعد کو ختم کرنا ہے جو ممالک کی معاشی ترقی میں حصہ ڈالتے ہیں۔
تفصیلات کے مطابق، ایرانی صوبے سیستان اور بلوچستان بارڈر ٹریڈ کمیٹی اور پاکستانی صوبے بلوچستان کے درمیان سرحدی تجارت ، نقل و حمل اور کسٹم میں رکاوٹوں کو دور کرنے کے آٹھویں اجلاس کا 20 اور 21 اکتوبر کو پاکستان کے شہر کوئٹہ میں انعقاد کیا جائے گا۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 2 =