ایرانی اسلحے کی تجارت کو سلامتی کونسل کی منظوری کی ضرورت نہیں ہے: تخت روانچی

نیویارک، ارنا- اقوام متحدہ میں ایران کے مستقل نمائندے نے ایران کے اسلحے کی پابندی کے خاتمے کا حوالہ دیتے ہوئے  کہا ہے کہ آج (اتوار) سے ایرانی اسلحے کی تجارت کو سلامتی کونسل کی پیشگی منظوری کی ضرورت نہیں ہے۔

یہ بات مجید تخت روانچی نے آج بروز اتوار ٹوئیٹر میں ایک  پیغام میں کہی۔

 انہوں نے کہا کہ ایران کے اسلحے کی پابندی کے خاتمے کے باوجود کہ آج (اتوار) سے ایرانی اسلحے کی تجارت کو سلامتی کونسل کی پیشگی منظوری کی ضرورت نہیں ہے۔

اقوام متحدہ میں ایران کے مستقل نمائندے کے کہنے کے مطابق امریکہ نے اس عمل کی روک تھام کی کوشش کیلیکن ناکام رہا۔ کیونکہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے امریکی کوششوں کو مسترد کردیا۔   

18 اکتوبر 2020 جوہری معاہدے کی منظوری کی پانچویں سالگرہ ہے۔ اس دن سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 کے کے پیراگراف 5 اور 6 کے مطابق ایران کو اسلحے کی برآمدات اور درآمدات کے لیے ممالک سے لائسنس حاصل کرنے کی ضرورت نہیں ہے اس کے علاوہ ، 2231 میں درج افراد کے لئے سفری پابندیاں بھی ختم کردی جائیں گی۔

اسلامی جمہوریہ ایران نے ہمیشہ ایرانی عوام پر عائد تمام پابندیوں کو بے بنیاد ، ناانصافانہ اور غیر قانونی سمجھا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@      

           

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 15 =