امریکی حکومت کے نئی پابندیاں اپنے اندرونی اہداف کیساتھ پروپیگنڈا سیاسی کوششوں کے دائرہ کار میں ہیں: ایرانی صدر

تہران، ارنا - ایرانی صدر مملکت نے ادویات اور خوراک کی فراہمی کے لئے کرنسی کی منتقلی میں سنجیدہ رکاوٹیں اور پریشانی پیدا کرنے کی امریکی کوششوں کو دہشت گردی اور غیر انسانی قرار دے دیا۔

یہ بات "حسن روحانی" نے جمعہ کے روز ایرانی مرکزی بینک کے سربراہ "عبدالناصر ہمتی" کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ امریکیوں نے ایران کی عظیم قوم کے خلاف ہر ممکن کوشش کی ہے اور انسانی حقوق کے خلاف اس طرح کے اقدامات سے ایرانی قوم کی مزاحمت کو توڑ نہیں سکتے ہیں۔
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ امریکی حکومت کے اقدامات اپنے اندرونی اہداف کے ساتھ پروپیگنڈا سیاسی کوششوں کے دائرہ کار میں ہیں۔
صدر روحانی نے کہا کہ امریکہ کا اس اقدام ٹرمپ کی اسٹریٹجک غلطی جوہری معاہدے سے علیحدگی کا تسلسل ہے اور امریکی انتظامیہ غلط تجزیاتی ڈھانچے میں اس بات پر یقین رکھتی ہے کہ پابندیاں ایران کی مزاحمت کو توڑ دے گی اور ہمیں پریشانی کا باعث بنے گی مگر وقت نے یہ ظاہر کیا ہے کہ یہ تجزیہ حقیقت سے دور  اور بے کار رہا ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ اپنی اسٹریٹجک غلطیوں کو دہرانے کے بعد ہر بار ناکام ہوجاتا ہے جس کی ایک نئی مثال ٹرگر میکانزم کا آغاز کرنا ہے۔
 انہوں نے مزید کہا کہ تمام ممالک دیکھتے ہیں کہ امریکی اقدامات مکمل طور پر بین الاقوامی قوانین اور ضوابط کے منافی ہیں اور کرونا صورتحال بھی واشنگٹن کا ایک مکمل غیر انسانی عمل ہے اور پوری دنیا میں انسانی حقوق کے دعوے کرنے والوں کو اس کی مذمت کرنی ہوگی۔
ایرانی مرکزی بینک کے سربراہ نے کہا کہ نئی امریکی پابندیوں نے پچھلی ادویات اور اساسی سامان سے چھوٹ ختم نہیں کی ہے اور جو بینک اس مرحلے پر ثانوی پابندیوں کا نشانہ بنے ہوئے ہیں ، وہ سامان کی مالی اعانت جاری رکھنے کے لئے سوئفٹ کا استعمال کرتے رہیں گے۔
ہمتی نے کہا کہ امریکی حکومت مختلف بہانوں کے تحت ادویات اور کھانے کی فراہمی کے لئے کرنسی کی منتقلی میں سنگین رکاوٹیں اور پریشانی پیدا کرتی ہے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 2 =