ایران کے پیسہ روکنے والے مجرموں اور ظالموں کو انصاف کا سامنا کرنا پڑے گا: ظریف

تہران، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ نے ایرانی بینکوں کے خلاف امریکی سخت پابندیوں پر اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملک کے اثاثوں کی روک تھام کرنے والے ذمہ داروں اور ان کے ساتھی عدالت میں جوابدہ ہوں گے۔

یہ بات "محمد جواد ظریف" نے جمعرات کے روز اپنے ٹوئٹر پیج میں کہی۔

انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے بحران کے دوران امریکی حکومت دوائیوں اور کھانے کی ادائیگی کے لئے باقی چینلز کو ختم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

ظریف نے اس بات پر زور دیا کہ ایرانی عوام بھی ان آخری مشکلات سے گزریں گے مگر کسی قوم کو فاقہ کشی کرنا انسانیت کے خلاف جرم ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے پیسوں کو روکنے والوں کو انصاف کا سامنا کرنا پڑے گا۔

تفصیلات کے مطابق، امریکی محکمہ خزانہ کے دفتر برائے غیر ملکی اثاثوں کے کنٹرول نے جمعرات کے روز ایرانی عوام کو گھٹنوں تک لانے کے مقصد کے ساتھ امین کیپیٹل کمپنی، زرعی ، ہاؤسنگ ، ورکرز ویلفیئر ، شہری ، نیا اکانومی ، رسالت ، حکمت ایرانی اور ایران زمین بینکوں پر نئی پابندیاں عائد کی۔

اس بیان میں اسلامی علاقائی تعاون ، کارافرین ، مڈل ایسٹ ، مہر ایران کریڈٹ انسٹی ٹیوشن ، پاسارگاد ، سامان ، سرمایہ ، کوآپریٹو ڈویلپمنٹ  اور سیاحت بینکیں اس فہرست بھی شامل ہیں۔

دریں اثنا ، امریکہ نے گذشتہ روز ایک فریب اقدام میں دعوی کیا تھا کہ ایران نے کرونا سے لڑنے میں مدد کی پیش کش کو مسترد کردیا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
9 + 7 =