27 ستمبر، 2020 12:12 PM
Journalist ID: 2392
News Code: 84055976
0 Persons
شہید الدورہ: صیہونیوں کی بچوں کے قتل کی علامت

تہران، ارنا – محمد الدورہ ایک 12 سالہ نوجوان مقبوضہ فلسطینی علاقوں کے نوجوانوں اور بچوں میں سے ایک ہے جو 30 ستمبر 2000 کو غزہ کی پٹی میں اسرائیلی فوجیوں کے گولی مارنے کے ساتھ اپنے والد کے ہمراہ شہید ہوگیا تھا۔

اگرچہ صہیونیوں کی فوج نے فلسطین پر 72 سال کے قبضے کے دوران اس سرزمین کے مظلوم عوام کے خلاف ان گنت جرائم کا ارتکاب کیا ہے، ان میں خواتین ، بچے اور یہاں تک کہ بے گناہ شیر خوار بھی شامل ہیں لیکن اپنے والد کے پیچھے پناہ لینے والے محمد الدورہ کی شہادت کی قسم اور اس کی میڈیا کوریج کی وجہ سے یہ جرم جلد ہی عالمی سطح پر آگیا۔


اس فلسطینی بچے کی شہادت اور اس کی برسی کے بعد سے فلسطینی آزادی گروپوں اور کارکنوں کے ذریعہ دنیا کے کچھ حصوں خصوصا فلسطین میں اس اور اس جیسے جرائم کی مذمت کرنے کے منصوبوں کا انعقاد کئے جاتے ہیں اور اب اس جرم کی تصویر عالمی صہیونی فوج کی بربریت کی مشہور شبیہہ بن گئی ہے۔


شائع اعدادوشمار اور معلومات کے مطابق، ناجائز صہیونی ریاست نے اب تک 4000 فلسطینی بچوں کو اپنی سرزمین میں شہید کیا ہے جن میں سے صرف 2019 میں ہی 16 تھے۔
اگست 2019 میں بچوں کے دفاع کے لئے بین الاقوامی تحریک نے اعلان کیا کہ اسرائیلی فوج نے مغربی کنارے اور غزہ کی پٹی میں 16 فلسطینی بچوں کو ہلاک کیا ہے۔

اس تحریک نے صیہونیوں پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ فلسطینی بچوں کی ہلاکت یا ان کی مستقل معذوری کے مقصد سے جان بوجھ کر طاقت کا استعمال اور جنگی گولیاں چلا رہی ہے۔
اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل آنٹونیو گوٹریش نے 2018 میں سلامتی کونسل کو لکھی گئی کی ایک رپورٹ میں کہا کہ اسرائیلی فوجیوں نے "احتجاج ، جھڑپوں، تعاقب اور گرفتاری کی کارروائیوں کی شکل میں" دو ہزار و 700 بچوں کو زخمی کیا ہے جو گزشتہ چار سالوں کے مقابلے میں بے مثال تھا۔
ٹائمز اخبار میں شائع ہونے والے اقوام متحدہ کے عہدیدار کے مطابق ، اسرائیلی فوج نے 2018 میں 56 فلسطینی بچوں کو ہلاک کیا اور یہ تعداد 2014 کے بعد سے غیر معمولی ہے۔
اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل نے صیہونیوں سے مطالبہ کیا کہ طاقت کے بے حد استعمال کو روکنے کے لئے فوری طور پر احتیاطی اور حفاظتی اقدامات اٹھائیں، یہ مسئلہ جو گذشتہ سات دہائیوں سے بار بار بیان کیا جاتا رہا ہے مگر اس کی قانون اور عالمی قوانین کی خلاف ورزی، امریکہ کی اس کے جرائم کی حمایت اور اس کے خلاف سنجیدہ اقدام نہ ہونے کی وجہ سے دہرایا گیا ہے اور یہاں تک کہ اسے وسیع تر جہت پر لیا گیا ہے۔

فلسطینی اتھارٹی کی وزارت اطلاعات نے بھی 2 جون 2020 کو یوم فلسطینی یوم اطفال (5 اپریل) کے موقع پر ایک شماریات شائع کیا جس کے مطابق پچھلے بیس سالوں میں تین ہزار فلسطینی بچے شہید اور دسیوں ہزار زخمی ہوئے ہیں۔
اس وزارت کے مطابق، اسرائیلی فوجیں فلسطینی بچوں پر حملے جاری رکھے ہوئے ہیں اور 28 اپریل 2000 کو الاقصی بغاوت کے آغاز سے لے کر اکتوبر 2019 کے آخر تک تین ہزار سے زیادہ فلسطینی بچے ہلاک اور دسیوں ہزار مزید زخمی ہوئے ہیں۔
ان اعدادوشمار کے مطابق ، 16 دسمبر 2016 سے  جب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے القدس شریف کو ناجائز صہیونی ریاست کا دارالحکومت قرار دیا تھا ، 2019 کے آخر تک 114 فلسطینی بچے ہلاک اور ہزاروں زخمی ہوگئے ہیں۔
2019  کے آغاز سے اب تک اسرائیلی فوج کے ذریعہ 18 سال سے کم عمر کے 475 بچے اور 2020 سے مارچ کے شروع تک 264 بچوں کو حراست میں لیا گیا ہے اور فی الحال 200 فلسطینی بچے اسرائیلی جیلوں میں نظربند ہیں اور 95 فیصد فلسطینی بچوں پر تشدد کیا جارہا ہے اور صیہونی تفتیش کار زبردستی سے انہیں اعتراف ملتے ہیں۔


اس سلسلے میں ہر سال محمد الدورہ کی شہادت کی برسی کے موقع پر فلسطینی بچوں اور نوعمروں کے ساتھ یکجہتی کا بین الاقوامی اجلاس ، فلسطینی انتفاضہ اور دیگر گروہوں کی بین الاقوامی کانفرنس کے بین الاقوامی سکریٹریٹ کی شرکت کے ساتھ اس بچے کی شہادت کی یاد مناتا ہے اور متعلقہ تنظیمیں اسلامی جمہوریہ ایران اور کچھ ممالک جیسے لبنان اور فلسطین میں منعقد کی جاتی ہیں۔
الدورہ کی شہادت پر عالمی سطح پر رد عمل کی مبنی پر دنیا کے مختلف ممالک اور آزاد شخصیات کی جانب سے ان گنت مذمتوں کی گئیں اس موقع پر ، ثقافتی انقلاب کی سپریم کونسل نے 31 اکتوبر 2015 کو اپنے اجلاس میں عوامی ثقافت کونسل کی تجویز پر 30 ستمبر کو ہر سال فلسطینی بچوں اور نوعمروں کے ساتھ یوم یکجہتی کا نام دیا تاکہ یہ دن ہمیشہ کے لئے لوگوں کے ذہنوں میں رہے۔
فلسطینی بچوں اور نوعمروں کے ساتھ بین الاقوامی اتحاد یکجہتی کے سکریٹری جنرل سید ابوالقاسم رحیمیان نے ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو قومی تقویم میں 30 ستمبر فلسطینی بچوں اور نوعمروں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے دن کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ہر سال محمد الدورہ کی شہادت کی برسی کے موقع پر ، فلسطینی بچوں اور نوعمروں کے ساتھ یکجہتی کے بین الاقوامی اجلاس کا انعقاد کیا جاتا ہے جس میں اسلامی جمہوریہ ایران اور دنیا بھر سے فلسطینی مسئلے پر ماہرین، طلباء اور طالب علم شرکت کر رہے ہیں۔


انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اس یونین کی سرگرمیوں کا اہم مقصد قبضہ اور قبضے کی پریشانیوں اور خاص طور پر فلسطینی بچوں اور نوعمروں پر عوامی شعور اجاگر کرنا ہے اور اس سال چوتھی تقریب کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی وجہ سے اس کے قواعد اور پروٹوکول جس میں معاشرتی فاصلے سمیت اور غیر ملکی مہمانوں کی موجودگی کے بغیر دو حصوں میں منعقد ہوگی۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 12 =