امریکہ کو افغانستان میں ہونے والی پیشرفت کے بارے میں صحیح معلومات نہیں ہے

تہران، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ کے خصوصی ایلچی برائے افغان امور نے کہا ہے کہ امریکہ کو افغانستان میں ہونے والی پیشرفت کے بارے میں صحیح معلومات نہیں ہے۔

محمد ابراہیم طاہریان نے گزشتہ روز میں ہونے والی پیشرفتوں میں ایران کے کردار کے بارے میں افغانستان کے لیے امریکہ کے خصوصی نمائندے زلمے خلیل زاد کی غیر حقیقت پسندانہ بیانات کو غیر ذمہ دارانہ اور اس ملک میں ہونے والے بحرانوں کے بارے امریکہ کی  نادرست معلومات قراردیا۔        

انہوں نے کہا کہ ایران نے سرکاری اور واضح طور پر افغان حکومت اور طالبان کے مابین مذاکرات کے آغاز کی حمایت کر کے اس ملک میں حقیقی اور دیرپا امن کے عمل کو آگے بڑھانے کے لئے اپنی آمادگی پر زور دیا ہے اور افغانستان میں استحکام اس ملک میں ہماری پالیسی کا لازمی حصہ ہے۔

فرانسیسی  نیوز ایجنسی نے کہا کہ افغانستان کے لیے امریکہ کے خصوصی نمائندے زلمے خلیل زاد نے افغانستان میں جنگ کے خاتمے کیلیے ایران سے مذاکرات کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

خلیل زاد نے امریکہ کے مقامی وقت کے مطابق جمعرات کو امریکی انسٹی ٹیوٹ آف پیس کے ایک مجازی اجلاس کو بتایا کہ "ایران ہمیں جیت یا ہار کے بغیر افغانستان کی جنگ میں رکھنا چاہتا ہے  تاکہ امریکہ اور ایران کے مابین معاہدہ ہونے سے پہلے ہی ہم ایک بڑی قیمت ادا کریں۔"

انہوں نے  مزید کہا کہ لیکن ہم نے اس معاملے پر ایرانیوں سے ملاقات کی تجویز پیش کی ہے  اور انہیں ان مختلف فریم ورک میں شامل ہونا چاہئے تا کہ افغانستان کے مستقبل کے بارے میں بات چیت کریں۔"

خلیل زاد نے یہ بھی کہا کہ امریکہ ایران کے حمایت یافتہ کسی بھی گروپ جو "ہمارے خلاف کارروائی کرے، کو نشانہ بنائے گا جو "ہمارے خلاف کارروائی کرتا ہےاور انہوں نے مزید کہا کہ واشنگٹن انہیں قریب سے تعاقب کرے گا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@                                                                                                                                                                                                                                                                                                                    

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 0 =