اقوام متحدہ کی منشیات کیخلاف جنگ میں ایران کی کوششوں کی تعریف

لندن – ارنا - اقوام متحدہ کے دفتر برائے منشیات اور جرائم کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر نے اسلامی جمہوریہ کی انسداد منشیات کی وسیع کوششوں کی تعریف کی۔

یہ بات "غدا ولی" نے بدھ کے روز ویانا میں ایرانی وزارت خارجہ کے ڈپٹی برائے قانونی اور بین الاقوامی امور "محسن بہاروند" کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے اقوام متحدہ کی منشیات اور انسانی اسمگلنگ کے خلاف جنگ میں مشترکہ تعاون کو مستحکم کرنے کی تیاری کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ انسداد دہشت گردی کے دفتر کے لئے اسلامی جمہوریہ ایران ایک اہم ملک ہے جس نے انسداد منشیات اور اس سے متعلق جرائم کے میدان میں وسیع پیمانے پر اقدامات اٹھایا ہے۔
غدہ ولی نے کہا کہ ایران کی جانب سے منشیات کے سراغ لگانے کی شرح قابل تعریف ہے اور بدعنوانی کی وجہ سے ہونے والی املاک کی بحالی ہمارے لئے ایک اہم مسئلہ ہے اور انسداد بدعنوانی کنونشن میں اس شعبے میں تعاون کی ایک قانونی بنیاد بھی ہے اور دفتر وہ اس شعبے میں دلچسپی رکھنے والے ممالک کے ساتھ تعاون کرنے کے لئے تیار ہے۔
محسن بہاروند نے منشیات کے خلاف جنگ میں ایران کے مالی اور انسانی نقصانات کا حوالہ دیتے ہوئے منشیات کے مسئلے سے نمٹنے کے لئے عالمی برادری اور دفتر سے ایران جیسے ممالک پر زیادہ سنجیدہ توجہ دینے، صلاحیتوں اور وسائل کو مستحکم کرنے کا مطالبہ کیا۔
انہوں نے غیر قانونی اور یکطرفہ پابندیوں پر تنقید، انسداد منشیات کی صلاحیتوں اور ان کے اثرات پر تبصرہ کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ اس طرح کی جابرانہ پابندیوں کو ختم کرنے کے لئے بھی کوششوں کی ضرورت کے علاوہ ان کے مقابلے کے لئے منشیات اور انسانی سمگلنگ سے نمٹنے کے لئے ضرورت مند ممالک کو ضروری سامان مہیا کرنے کے لئے بیک وقت اقدامات کرنے چاہیئے۔
نائب ایرانی وزیر خارجہ نے بھی انسانی اسمگلنگ کے مسئلے پر توجہ دیتے ہوئے تجویز پیش کی کہ ایران ، افغانستان اور دفتر کے درمیان مشترکہ سہ فریقی کوشش کی جائے جس میں چوکیوں اور بارڈر پولیس کو مضبوط بنانا ہے۔
انہوں نے جرائم اور بدعنوانی کے خلاف جنگ کے لئے ایرانی اداروں کے منصوبوں کا بھی حوالہ دیتے ہوئے مزید کہا کہ ایران سے فرار ہونے والے اور مغربی ممالک کی محفوظ پناہ گاہوں میں رہنے والے مجرموں کے ذریعہ بدعنوانی یا چوری کے نتیجے میں جائیداد کی واپسی ایک ایسا مسئلہ ہے جس پر دفتر کو سنجیدگی سے غور کرنا چاہئے۔
یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایران کے نائب وزیر خارجہ ویانا میں بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی (IAEA) کے بورڈ آف گورنرز کے اجلاس میں شرکت کریں گے، جنہوں نے آئی اے ای اے کے ڈائریکٹر جنرل رافائل گروسی سے بھی ملاقات کی تھی اور دونوں فریقین نے حفاظتی اقدامات پر تعاون کو مضبوط بنانے پر تبادلہ خیال کیا تھا۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
7 + 2 =