ایران نے مستحکم آاسوٹوپ کی افزودگی کی سائنس کو حاصل کیا ہے

تہران، ارنا – ایرانی جوہری توانائی تنظیم کے سربراہ نے کہا ہے کہ ہم نے پائیدار آاسوٹوپ کی افزودگی اور اس سے متعلقہ ٹکنالوجی کی سائنس کو حاصل کیا ہے۔

گیس سینٹرفیوگیشن طریقہ کے ذریعہ مستحکم آاسوٹوپ کی تیاری کے منصوبے کے دوسرے فیز کے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کے آغاز کی تقریب گذشتہ ہفتے ایرانی جوہری ایٹمی ادارے کے سربراہ "علی اکبر صالحی"، نائب ایرانی صدر اور اس تنظیم کے نائبین اور مینیجرز کی موجودگی میں فردو کے جوہری مرکز میں منعقد ہوئی۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے نے مستحکم آاسوٹوپ (stable isotope) کی افزودگی اور اس سے متعلقہ ٹکنالوجی کی سائنس کو حاصل کیا ہے اور ایران ان چند ممالک میں سے ایک ہے جو مستحکم آاسوٹوپس تیار کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ امید ہے کہ اس منصوبے کو اگلے دو سالوں میں افتتاح کیا جائے گا اور کچھ مستحکم آئسوٹوپس کی قیمت تقریبا 140 ہزار ڈالر ہے۔ اگر ہم اس کا موازنہ تیل کی قیمت سے ، جو 30 ڈالر سے 40 ڈالر فی بیرل ہے ، کے ساتھ کریں ، تو ہم اس مصنوع کے بہت زیادہ ویلیو ایڈیڈ Value added کو دیکھیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے اس سمت میں بڑی پیش قدمی کی ہے اور ان چند ممالک میں سے ایک ہے جس کو مستحکم آاسوٹوپس تیار کرنے کی صلاحیت ہے۔

علی اکبر صالحی  نے کہا کہ جوہری توانائی تنظیم ایرانی طاقت کی علامتوں میں سے ایک ہے اگرچہ ایرانی پرامن جوہری سرگرمیوں کو ہمیشہ سامراجی طاقتوں کے چیلنجوں کا سامنا ہے لیکن ہمیشہ اس حوالے سے کامیاب تھے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
6 + 11 =