امریکی غصے کے خوف سے ہتھیار ڈالنے سے ان کی لالچ میں اضافہ ہوتا ہے :ظریف

تہران، ارنا – ایرانی وزیر خارجہ نے ٹرمپ کی جانب سے بین الاقوامی عدالتِ جرائم کے اٹارنی جنرل پر پابندی عائد کرنے کے ردعمل پر کہا کہ امریکی غصے کے خوف سے ہتھیار ڈالنے سے صرف ان کی لالچ میں اضافہ ہوتا ہے۔

محمد جواد ظریف نے گزشتہ روز ٹوئٹر میں اپنی ایک ٹویٹ میں کہا کہ امریکہ نے بین الاقوامی عدالتِ جرائم کے اٹارنی جنرل پر  پر پابندیاں عائد کردی ہیں اور  یہ ایک ایسا طریقہ تھا جو سب سے پہلے افراد سے شروع ہوا، پھر جس میں چھوٹی، درمیانے اور بڑے طاقتوں کو  اور اب بھی بین الاقوامی شخصیات شامل کیا گیا ہے۔
اس لامتناہی جنون کو روکنے کا واحد طریقہ امریکی د یہ ہے کہ [امریکہ] کی درخواستوں کو تسلیم نہ کرنا ہے۔ امریکی غصے کے خوف سے ہتھیار ڈالنے سے امریکہ لالچی ہوگا۔

امریکی وزیر خارجہ نے کہا کہ ہر وہ فرد یا ادارہ جو آئی سی سی کے پراسیکیوٹر فاتو بنسودا کو مالی امداد فراہم کرے گا اس پر پابندی عاید کی جائیں گی۔

پمپیو نے بدھ کے روز اپنی پریس کانفرنس میں کہا کہ امریکہ نے کبھی بھی اس عدالت کے قیام کے لئے روم کے قانون کی توثیق نہیں کی ہے اور ہم اس عدالت کے غیر قانونی اقدامات کو ہرگز برداشت نہیں کریں گے جس کا مقصد امریکیوں کو اس عدالت میں لانا ہے۔

اقوام متحدہ کے ترجمان "اسٹفن دوجاریک نے بین الاقوامی عدالتِ جرائم کا بائیکاٹ کرنے کے لیے امریکی اقدام کے جواب میں کہا کہ ہم قریب سے ان  مسائل کا جائزہ کر رہے ہیں۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 3 =