ایران کا طالبان کیجانب سے افغانستان میں تین روزہ جنگ بندی کا خیرمقدم

تہران، ارنا- ایرانی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے طالبان گروہ کیجانب سے تین روزہ جنگ بندی کا خیرمقدم کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کردیا کہ طالبان کا اس اقدام، افغانستان میں مفاہمت اور قیام امن کی پیش خیمہ بن جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق "سید عباس موسوی" نے افغان بہن بھائیوں کو عید الاضحی کی آمد پر مبارکباد دیتے ہوئے طالبان کیجانب سے تین روز جنگ بندی کا خیر مقدم کیا اور ان کے اس اقدام کو افغانستان میں قیام امن کے حوالے سے مثبت قدم قرار دے دیا۔

انہوں نے اس امید کا اظہار کردیا کہ بہت جلد افغان حکومت کی قیادت اور تمام سیاسی گروہوں اور دھاروں بشمول طالبان کی شرکت سے انٹرا افغان ڈائیلاگ کا آغاز ہوجائے گا جس سے تمام فریقین کے اتفاق رائے اور افغان آئین اور جمہوریت پر مبنی مفاہمت کا حصول ہوجائے گا۔

 موسوی نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران ایک بار پھر فریقین کی درخواست کی بنا پر انٹرا افغان ڈایئلاگ میں سہولت کار بننے پر اپنے آمادگی کا اظہار کر لیتا ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ افغان طالبان کیجانب سے عیدالاضحی کے موقع پر 3 روز کے لیے سیزفائر کا اعلان کیا گیا جسکے جواب میں افغان حکومت نے بھی جنگ بندی کا اعلان کردیا۔

افغان طالبان کے ترجمان "ذبیح اللہ مجاہد" نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹ پر عیدالضحی کے موقع پر 3 دن کی جنگ بندی کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ عید کے موقع پر طالبان کسی قسم کی شدت پسند کارروائی نہیں کریں گے البتہ اپنا دفاع ضرور کریں گے اور اس کا آغاز جمعہ سے ہوگا۔

طالبان کی جانب سے 3 دن کی جنگ بندی کے اعلان کے بعد افغان حکومت نے بھی سیز فائر کا اعلان کردیا، افغان صدر "اشرف غنی" کے ترجمان "صدیق صدیقی" نے طالبان کے اعلان کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے بھی فورسز کو جنگ بندی کا حکم دے دیا ہے۔

واضح رہے افغان طالبان اور افغان حکومت کے درمیان عیدالفطر پر بھی 3 روزہ جنگ بندی کا معاہدہ ہوا تھا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
7 + 9 =