ایران اور چین کے درمیان باہمی تعاون ایک عام مسئلہ ہے: تخت روانچی

نیویارک، ارنا – اقوام متحدہ میں ایران کے سفیر اور مستقل نمائندہ نے ایران  اورچین کے درمیان دیرینہ تعلقات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ایران چین کا معاہدہ کوئی غیر معمولی مسئلہ نہیں ہے۔

یہ بات مجید تخت روانچی نے جمعرات کے روز امریکی راشا ٹودے چینل کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہا کہ ایران اور چین قدرتی اتحادی بھی ہیں اور یہ تعاون ان دونوں کے مفاد میں ہے۔

 انہوں نے جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی کو موجودہ ہنگامے کا ذمہ دار بھی قرار دیتے ہوئے بتایا کہ وہی امریکہ تھا جو جوہری معاہدے کے نکلنے کے بعد مذاکرات کی میز کو چھوڑا اور امریکی حکام کا اس دعوی کہ دوا اور خوراک پابندیوں کا جزو نہیں ہے، من گھرٹ اور بے اساس ہے۔

انہوں نے کہ امریکی پابندیوں کے ذریعہ خوراک اور دوا کی درآمدات کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

تخت روانچی نے خلیج فارس میں ٹینکروں پر حملے میں ایران کے ملوث ہونے کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ یہ الزامات بے بنیاد ہیں اور جس کے لئے ابھی تک کوئی ثبوت فراہم نہیں کیا گیا ہے۔

دہشت گردی کے خلاف جنگ کے ہیرو جنرل سلیمانی کا قتل خطے میں دہشت گردوں کے لئے سب سے بڑا امریکی تحفہ تھا۔

روانچی نے کہا کہ داعش اور اس کے اتحادیوں نے اس قتل کا جشن منایا کیونکہ جنرل سلیمانی انتہاپسندی سے موثر انداز میں لڑنے کو جانتے تھے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 1 =