یوکرین طیارے کے بلیک باکس پڑھنے کا آغاز،  فوجی عدالت کے نمائندے کی موجودگی

تہران، ارنا – ایرانی دارالحکومت تہران کے فوجی پراسیکیوٹر نے کہا ہے کہ فوجی عدالت کے نمائندے کی موجودگی کے ساتھ ہمارے ملک میں مارگرائے گئے یوکرانئی طیارے کے بلیک باکس پڑھنے کا آغاز کیا گیا ہے۔

غلام عباس ترکی نے کہا کہ جمعہ کے روز یوکرین مسافر طیارے کے بلیک باکس کو ڈیکریشن کے لئے فرانس بھیجا گیا تھا۔
انہوں نے مزید کہا کہ یوکرائن ایئر لائنز سے تعلق رکھنے والے بوئنگ 737 مسافر بردار طیارے کے بلیک باکس کو ایرانی فوجی پراسیکیوٹر کے دفتر کے نمائندے کے ساتھ ایک طیارے کے ذریعے پیرس بھیجا گیا تھا اور اس کے پڑھنے کا عمل شروع ہوچکا ہے۔

انہوں نے  کہا کہ بین الاقوامی سول ایوی ایشن آرگنائزیشن (آئی سی اے او) کے قواعد کے مطابق ، یوکرائن (ہوائی جہاز کا مالک ملک) ، ریاستہائے متحدہ (مینوفیکچرنگ ملک) ، کینیڈا ، سویڈن اور افغانستان کے نمائندوں کو طیارے کی ڈیکریپشن تقریب میں شرکت کے لئے مدعو کیا گیا ہے۔
ترکی نے کہا کہ ایرانی ہوا بازی کی تنظیم، فوجی عدالت اور آئی سی اے او کے نمائندے بھی فرانس میں موجود ہیں۔
انہوں نے اس کی نشاندہی کرتے ہوئے کہ اس طرح کے ہوائی جہاز کے بلیک باکس کو پڑھنا اس سے پہلے نہیں کیا گیا تھا اور ایرانی سول ایوی ایشن اتھارٹی کے عزم کے ساتھ فرانس میں لیبارٹریوں میں اس اسٹیشن کو پڑھنے کے لئے ضروری تکنیکی سہولیات موجود ہیں اور اسلامی جمہوریہ ایران نے بین الاقوامی سول ایوی ایشن انسٹی ٹیوشن کو فرانس بھیجنے کے لئے خط تیار کرنے کی تیاری کرلی ہے ۔
یہ بات قابل ذکر ہے کہ 8 جنوری 2020ء کو ایران کی جانب سے عراق میں امریکی فوجی اڈوں پر میزائل حملے ختم ہونے کے کچھ گھنٹے بعد یوکرین کا طیارہ ایران کے امام خمینی ائیرپورٹ کے قریب گر کر تباہ ہوگیا جس میں سوار 167 مسافر اور 9 عملے جاں بحق ہوگئے تھے۔
ایرانی مسلح افواج اندرونی تحقیقات کے بعد اس نتیجے پر پہنچیں کہ میزائل انسانی غلطی کی وجہ سے فائر ہوا جس کے نتیجے میں یوکرائنی طیارہ تباہ ہوا، اور معصوم لوگ جاں بحق ہوگئے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
9 + 3 =