ملک میں ٹریٹمنٹ پلانٹس اسلامی انقلاب سے پہلے کے مقابلے میں چھ گنے ہوگئے ہیں: صدر روحانی

تہران، ارنا- ایرانی صدر نے ملک میں 9۔99 فیصد افراد کو میھٹے اور صاف پانی تک رسائی پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی انقلاب کی کامیابی کے ابتدا میں ملک میں صرف 27 ٹریٹمنٹ پلانٹس موجود تھے لیکن اب ان میں اضافے ہو کر ان کی تعداد 167 تک پہنچ جائے گی۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایران میں واٹر فلٹریشن پلانٹس کی تعداد اسلامی انقلاب سے پہلے کے مقابلے میں چھ گنی ہوگئی ہے۔

ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر حسن روحانی نے آج بروز جمہرات کو صوبے ہرمزگان میں محکمہ توانائی کے زیر اہتمام میں نئے منصوبوں کے نفاذ کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے صنعتی میدان، پٹرول کی پیداوار اور آئل ریفائریروں کے شعبے میں صوبے ہزمرگان کی بے پناہ صلاحیتوں کا ذکرکرتے ہوئے کہا کہ اس صوبے میں شیعی اور سنی برادری ایک دوسرے کیساتھ مل کر رہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ صوبے ہرمزگان میں واقع جاسک پورٹ عنقریب ایک اہم برآمداتی پورٹ میں تبدیل ہوگی اور آئے دن صنعت کے میدان میں اس صوبے کی پوزیشن میں مزید بہتری آئے گی۔

صدر روحانی نے کہا کہ اسلامی انقلاب کی کامیابی کے ابتدا میں صرف 74 فیصد افراد کو میٹھے اور صاف پانی تک رسائی حاصل تھی لیکن اب اس میں قابل قدر اضافہ ہوکر 9۔99 فیصد تک پہنچ گیا ہے جو انتہائی قابل قدر ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی انقلاب کی کامیابی کے ابتدا میں ملک میں صرف 27 ٹریٹمنٹ پلانٹس موجود تھے لیکن اب ان میں اضافے ہو کر ان کی تعداد 167 تک پہنچ جائے گی۔

صدر روحانی نے کہا کہ رواں سال کے دوران 12 ٹریٹمنٹ پلانٹس کا افتتاح ہوگا اور ساتھ ہی آئندہ سال کے ابتدائی چھ مہینوں کے دوران بھی مزید 8 ٹریٹمنٹ پلانٹس کا افتتاح کیا جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ تقریبا 26 ارب میٹر مکعب غیر صاف پانی کو ساحلی صوبوں بشمول ہرمزگان، سیستان و بلوچستان اور خوزستان کیلئے مختلف شعبوں میں استعمال کیلئے فراہمی کی گئی ہے لیکن ان صوبوں میں صاف اور میھٹے پانی کی بھی ضرورت ہوتی ہے۔

ایرانی صدر نے کہا کہ بہت سارے ممالک سمندر کے پانی کا استعمال کرتے ہیں؛ خلیج فارس کے جنوبی ممالک اور بحیرہ عمان کے ممالک بھی سمندر کے پانی کا استعمال کرتے ہیں جو ماحولیات کے تحغظ کے فریم ورک کے اندر بھی ہیں اور ہمیں بھی ایسا کرنا چاہیے۔

انہوں نے نجی شعبے سے مطالبہ کیا کہ وہ پانی صاف کرنے کے سلسلے میں سرمایہ کاری کریں جس سے خود ان کے علاوہ  ملک کے مفادات کی فراہمی ہوگی۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 3 =