جوہری معاہدے کے مسائل کے اصل مجرم امریکہ کے قانون شکنی کرنے والے ہیں: ایرانی صدر

تہران، ارنا – ایرانی صدر مملکت نے کہا ہے کہ موجودہ امریکی حکومت کسی بھی چیز کا معیار نہیں بن سکتی اور 2018 میں جوہری معاہدے سے ان کی علیحدگی کے بعد اسلامی جمہوریہ ایران کی ذہانت نے ثابت کردیا کہ اس معاہدے کے مسائل کے اصل مجرم امریکہ کے قانون شکنی کرنے والے ہیں۔

یہ بات "حسن روحانی" نے بدھ کے روز کابینہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے جوہری معاہدے کی پانچویں سالگرہ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس سفارتی اقدام کا مقصد یہ تھا کہ دنیا کو یہ ثابت کرے کہ ایران ایک پرامن ملک ہے اور امریکیوں اور صیہونیوں نے کئی سالوں سے اس منصوبے جو ایران کا سیکیورٹی منصوبہ تھا، پر عمل پیرا ہے، بے بنیاد اور ناقابل اعتماد ہے۔
صدر روحانی نے کہا کہ آج امریکہ کے تمام دوست اور امریکی عوام کا ایک بہت بڑا حصہ اس بات پر متفق ہے کہ ان کا یہ اقدام امریکی عوام اور ان کے دوستوں کے مفاد میں نہیں ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے ثابت کیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے خلاف کئی سالوں سے جاری تمام پروپیگنڈہ ناقابل اعتبار اور بے بنیاد رہا ہے اور ایران کی ایٹمی سرگرمیاں ہمیشہ بین الاقوامی قانون کے دائرے میں رہتی ہیں۔\
ایرانی صدر نے قریب مستقبل میں ایران مخالف اسلحہ کی پابندی کے خاتمے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ آنے والے ہفتوں میں ہمارا ایک اور امتحان ہے اور یہ ایران پر اسلحہ کی پابندی کا خاتمہ ہے جو ہم اس مسئلے کو قریب سے نگرانی کرتے رہتے ہیں۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 5 =