ایران اور آسٹریا کا تعاون مغربی ممالک کے درمیان مثالی ہے

تہران، ارنا- ایران میں تعینات آسٹرین سفیر نے مغربی ممالک کے درمیان ایران اور آسٹریا کے تعاون کو مثالی قرار دیتے ہوئے کہا کہ دونوں ملکوں کے خصوصی تعاون کی اصل وجہ باہمی اعتماد ہے۔

ان خیالات کا اظہار " اشتفان شلتس" نے پیر کے روز تہران میونسپلٹی اور آسٹرین سفارتخانے کے درمیان ثقافتی اور معاشرتی شعبوں میں تعاون سے متعلق معاہدے پر دستخط کی تقریب کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایران اور آسٹریا کے درمیان تحریری رابطے کے 700 سال سے زائد، تزویراتی تعلقات کے 160 سال اور تہران میں تعینات آسٹرین سفارتخانے کے ثقافتی شعبے کے قیام سے 60 سال گزر چکے ہیں جس سے دونوں ملکوں کے درمیان تعاون کی اہمیت ظاہر ہوتی ہے۔

شلتس نے کوویڈ- 19 کے علاج کے سلسلے میں ایرانی محققین کیجانب سے خون میں موجود انٹی باڈیز میں ریسرچ میں ترقی کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ آسٹریا ان تحقیقیات کے نتائج سے فائدہ اٹھانے میں دلچسبی رکھتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایران کو دنیا میں بائیو ٹیکنالوجی اور نینو ٹیکنالوجی کے شعبوں میں اچھی پوزیشن حاصل ہے اور ہم اس حوالے سے ایران سے تعاون پر دلچسبی رکھتے ہیں۔

اس اجلاس میں شریک نائب آسٹرین سفیر "الکساندر ریگرگ" نے کہا کہ میلاد ٹاور میں ایران اور یورپ کے درمیان "امن" نامی مشترکہ کانسرٹ کا انعقاد آئندہ عیسوی سال میں ملتوی کی گئی۔

اس موقع پر تہران کے نائب میئر "محمد رضا جوادی یگانہ" نے بھی تہران اور آسٹریا کے میونسپلٹیز کے درمیان آرٹس اور ثقافت، معاشرتی اور کھیل کے شعبوں میں تعلقات کے فروغ پر زور دیا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 0 =