جوہری معاہدے کا تحفظ عالمی امن کیلئے لازمی ہے: پاکستان تھنک ٹھنک چیف

اسلام آباد، ارنا- پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف پیس اینڈ ڈپلومیٹک اسٹڈیز کی خاتون سربراہ نے ایران سے متعلق ٹرمپ کےغیر تعمیری موقف اور دوسرے ملکوں کیخلاف دباؤ ڈالنے کی پالیسی کی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ایران جوہری معاہدے کے یورپی فریقین کی بدعہدی اور ان کے امریکی نقش قدم پر چلنے کے باوجود اس جوہری معاہدے کا تحفظ عالمی امن کیلئے لازمی ہے۔

ان خیالات کا اظہار "فرحت آصف" نے پیر کے روز ارنا نمائندے کیساتھ خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے گزشتہ 5 سالوں کے دوران‏، ایران اور گروپ 1+5 کے درمیان طے پانے والے جوہری معاہدے کو سفارتکاری کی ایک عظیم کامیابی قرار دیتے ہوئے اس معاہدے کے تحفظ کو عالمی امن کیلئے لازمی قرار دے دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ بہت بڑی افسوس کی بات ہے کہ وہ ممالک جن کے پاس سب سے زیادہ ہتیھار ہیں وہ دوسرے ممالک کیجانب سے پُرامن جوہری ٹیکنالوجی کے استعمال کی راہ میں رکاوٹیں حائل کرتے ہیں اور وہ خاص طور پر ایران کے پُرامن جوہری پروگرام کے فروغ میں روڑے اٹکا رہے ہیں۔

خاتون پاکستانی تجزیہ کار نے کہا کہ اقوام متحدہ کے قوانین کے مطابق تمام ممالک کو پُرامن ٹیکنالوجی کے فروغ اور استعمال کا حق حاصل ہے اور ایران نے بھی اس مقصد کے حصول کیلئے 5 سال پہلے دیگر عالمی طاقتوں سے جوہری معاہدے پر دستخط کیا ہے۔

آصف نے ایران کیجانب سے اس معاہدے پر دستخط کے مقصد کو دنیا میں امن اور استحکام کی تقویت قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس بات کی وجہ سے ایران نے اب تک اپنے تمام جوہری وعدوں پر عمل کیا ہے۔

انہوں نے ایران مخالف پابندیوں کو ایران سے متعلق امریکی معاندانہ موقف کی علامت قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ پابندیاں ایرانی ترقی کی راہ میں رکاوٹیں حائل نہیں کرسکتیں اور اب علاقے میں ایرانی طاقت اور اثر و رسوخ مزید بڑھ گئی ہے۔

فرحت آصف نے کہا کہ تمام ممالک جوہری وعدوں پر عمل کرنے سے متعلق ایران کی شفاف کارکردگی کی تصدیق کرتے ہیں اور اس معاہدے کے یورپی فریقین کی بدعہدی اور ان کے امریکی نقش قدم پر چلنے کے باوجود اس جوہری معاہدے کا تحفظ عالمی امن کیلئے لازمی ہے۔

انہوں نے کہا کہ جوہری معاہدے کے یورپی فریقین نے امریکی دباؤ کے تحت اپنے جوہری وعدوں کو پورا کرنے کیلئے اچھی کارکردگی کا مظاہرہ نہیں کیا ہے تا ہم ایران سے متعلق ان کا موقف واشنگٹن سے الگ ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
8 + 3 =