سلامتی کونسل نے ایران مخالف امریکہ اقدام کی حمایت نہیں کی: تخت روانچی

نیویارک، ارنا - اقوام متحدہ میں ایران کے مستقل نمائندے نے قرارداد2231 کے بارے میں سلامتی کونسل کے اجلاس کے بعد کہاکہ کونسل ممبران نے یہ ظاہر کیا ہے کہ وہ اسلحے کی پابندی میں توسیع کے لیے امریکی اقدام کی حمایت نہیں کرتے ہیں۔

یہ بات مجید تخت روانچی نے گزشتہ روز ٹوئٹر میں اپنے ذاتی اکاونٹ پر لکھی۔

آج  اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ممبران نے ایک بار پھر جوہری معاہدے اور قرارداد 2231 کی حمایت کی۔ ان کے تبصروں سے یہ ثابت ہوا کہ وہ ایران پر اسلحےکی پابندی میں توسیع کے امریکی اقدام جو قرارداد 2231 کی خلاف ورزی ہے، کی حمایت نہیں کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ کو اپنی پیش کی گئی قرارداد کے مسودے کو دوبارہ مسترد ہونے سے پہلے ترک کرنا چاہیے۔

قابل ذکر ہے کہ ایران جوہری معاہدے کے تحت قرار داد 2231 کے نفاذ سے متعلق سربراہ اقوام متحدہ کی رپورٹ کا جائزہ لینے کیلئے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس کا گزشتہ رات آغاز کیا گیا۔

منعقدہ اس اجلاس جو دنیا میں کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی وجہ سے آن لائن انعقاد کیا گیا، میں قرارداد نمبر 2231 کے نفاذ کی تازہ ترین صورتحال سے متعلق سربراہ اقوام متحدہ کی رپورٹ کو پڑھ کر سنایا گیا۔

منعقدہ اس اجلاس کے دوران اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے تمام اراکین نے اپنے اپنے نقطہ نظروں کا اظہار کیا۔

ایرانی وزیر خارجہ اقوام متحدہ کے آن لائن اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے سلامتی کونسل کیجانب سے اقدامات اٹھانے میں تاخیر کو کثیرالجہتی اور قانونی کی بالادستی کیلئے بہت بڑا دھچکا قرار دیا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 1 =