پابندیاں عائد کرنے والے ایرانی ترقی کی راہ میں رکاوٹیں حائل نہیں کر سکتے: صدر روحانی

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر مملکت نے کہا ہے کہ وہ تمام غیر ملکی کمپنیاں جنہوں نے ہمارے ساتھ تعاون نہیں کیا اور ساتھ ہی پابندیاں عائد کرنے والے ممالک یعنی امریکہ اور ناجائز صہیونی ریاست نے بخوبی دیکھ لیا کہ وہ ایرانی ترقی کی راہ میں رکاوٹیں حائل نہیں کر سکتے۔

ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر "حسن روحانی" نے آج بروز جمعرات کو تین صوبوں بشمول مغربی آذربائیجان، مرکزی اور ہزمرگان میں محکمہ تیل کی قومی منصوبوں کے نفاذ کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ایران کیخلاف پابندیاں لگانے والے ممالک یعنی امریکہ اور ناجائز صہیونی ریاست نے بخوبی دیکھ لیا کہ وہ ترقی اور سائنس اور ٹیکنالوجی کی پیداوار میں ایران کی راہ میں رکاوٹیں حائل نہیں کر سکتے۔

انہوں نے "گورہ-جاسک" پائپ لائن  منصوبے کو حکومت کے ایک اہم اسٹریٹجک منصوبے قرار دیتے ہوئے کہا کہ رواں سال کے اختتام تک 17 منصوبوں کے نفاذ سے ملک میں پیٹروکیمیل پیداوار کی شرح گزشتہ 7 سالوں کے مقابلے میں دوگنی ہوگئی ہے اور اس کی مالیت 25 ارب ڈالر تک پہنچ جائے گی۔

ایرانی صدر نے کہا کہ اس منصوبے کے پمپوں بھی اندروں ملک میں تیار کیا جائے گا اور ہم نے پابندیوں کی وجہ سے غیر ملکیوں کے بغیر تعاون اور اپنے ہی ملک کے ماہرین، محققین اور عملے کی کوششوں سے اس عظیم منصوبے کا نفاذ کیا ہے۔

صدر روحانی نے کہا کہ پابندیاں، ملک میں تمام تر مشکلات پیدا کرنے کے باوجود بعض شعبوں میں اہم مواقع  پیدا کرنے کی باعث بن گئی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ آج کی ملک کی توانائی کی تاریخ کا ایک بہت اہم دن ہے اور پابندیوں اور دباؤ کے پیش نظر ایران بڑے معاشی منصوبوں پر عمل درآمد کرنے کے قابل ہے جس سے قوم، محققین، کاریگروں سمیت تیل و توانائی کے شعبوں کی بے پناہ صلاحتیں ظاہر ہوتی ہیں۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 10 =