ایران بین الاقوامی صفحے پر منشیات اسمگلنگ کی روک تھام کا علمبردار ہے

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران، منشیات کی روک تھام کے حوالے سے 3 ہزار 800 شہیدوں اور 12 ہزار غازیوں کی جانوں کا نذارنہ دینے سے بین الاقوامی سطح پر منشیات کیخلاف جنگ کا علبمردار ہے جس کا اکثر بین الاقوامی تنظیموں نے بھی اعتراف بھی کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق، 2020ء میں اقوام متحدہ کے ادارے برائے جرائم اور منشیات کی روک تھام کے امور کے نمائندے نے اپنی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ایران کے ذریعے دنیا بھر میں 90 فیصد افیون، 26 فیصد ہیروئن اور 48 فیصد مورفین دریافت کی گئی ہیں۔

اس کے علاوہ ایران میں منشیات کیخلاف جنگ کے ادارے کے ڈآئریکٹر جنرل "اسکندری مومنی" کے مطابق، گزشتہ سال کے دوران ایرانی حساس اداروں کے اہلکاروں نے شرپسندوں، اسمگلروں اورمنشیات کی ٹرانزٹ کرنے والے بین الاقوامی اسمگلروں کیخلاف 2 ہزار 319 مسلح کاروائیاں کی ہیں جن میں انہوں نے علاقائی اور بین الاقوامی اسمگلروں کے 1886 گروہوں کو پکڑنے کے علاوہ 815 ٹن مختلف قسم کی منشیات بشمول 36 ٹن ہیروئن اور مورفین، 74 ٹن چرس کو ضبط کرنے میں کامیابی حاصل کی ہے۔

اس بات کے پیش نظر کہ منشیات کی اسمگلنگ ایک بین الاقوامی جرم ہے تو اس کے خاتمے کیلئے فوری توجہ اور ترجیح کی ضرورت ہے؛ لہذا منشیات کی اسمگلنگ کیخلاف جنگ تمام حکومتوں کی اجتماعی ذمہ داری ہے اور اس مقصد کے حصول کیلئے بین الاقوامی تعاون کے فریم ورک کے اندر ٹھوس اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے۔

ایران کیجانب سے منشیات کی اسمگلنگ سے نمٹنے کی کوششیں ان بین الاقوامی وعدوں سے کہیں آگے نکل چکی ہیں۔

پاکستان اور افغانستان سے پڑوسی ہونے اورعالمی سطح پر کھلے پانیوں تک رسائی کی وجہ سے  ایران کے دشمن عناصر ایک طرف اسمگلنگ مافیا کا استعمال کرتے ہوئے بے روزگار نوجوانوں کو من گھڑت وعدوں کیساتھ منشیات کی ترسیل اور تقسیم کیلئے راغب کرنے کا دھوکہ دیتے ہیں اور دوسری طرف ملک کے مستقبل بنانے والوں کو نشے کے جال میں پھنس دیتے ہیں۔

اور یہ ایسے وقت ہے جب ایران نے اسلامی انقلاب کی کامیابی کے بعد منشیات کیخلاف جنگ کیلئے پختہ عزم رکھتے ہوئے "منشیات کی روک تھاک پر تمام حکومتوں کی ذمہ داریوں" پر زور کے باجود بغیر کسی بین الاقوامی حمایت کے اس حوالے سے اپنی ذمہ داری نبھاتے ہوئے دنیا کے صف اول میں کھڑا ہے۔

 اس حوالے سے ایران میں قائم اقوام متحدہ کے دفتر برائے جرائم اور منشیات کی روک تھام کے نمائندے "الکساندر فڈولف" نے انسداد منشیات کے عالمی چیلنج میں حصہ لینے کیلئے ایرانی حکومت کی کوششوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کے دفتر برائے منشیات اور جرائم (یو این او ڈی سی) انسداد منشیات کے سلسلے میں ایران کیساتھ تعاون کو بہتر بنانے کیلئے کام کرے گا۔

یہ بات قابال ذکر ہے کہ 26 جون انسداد منشیات کا عالمی دن ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
7 + 11 =