عالمی ایٹمی ادارے کے بورڈ آف گورنرز کو ایرانی سفیر کا انتباہ

لندن، ارنا - جنیوا میں قائم عالمی اداروں میں تعینات ایرانی مندوب نے نے عالمی ایٹمی ادارے کے بورڈ آف گورنرز کے سہ ماہی اجلاس میں میں امریکہ اور ان کے اتحادیوں کی طرف سے ایران کے خلاف اشتعال آمیز اقدامات پر انتباہ کیا۔

یہ بات کاظم غریب آبادی نے جمعرات کے روز ٹوئٹر میں اپنے ذاتی اکاونٹ پر لکھی۔

انہوں نے کہا کہ ویانا کثیرالجہتی کا تقریبا آخری گڑھ ہے جو حالیہ برسوں میں اپنی اصل روح کے تحفظ میں کامیاب رہا ہے لیکن اس کے باجود انہوں نے خبردار کیا کہ اگر عالمی ایٹمی ادارے کے بورڈ آف گورنرز اس ہفتے میں ضروری اقدام نہ اٹھائے تو بدقسمتی سے یہ ایک بھولی ہوئی کہانی بن جائے گی۔

انہوں نے اس سے پہلے بھی  وارننگ دی تھی کہ عالمی جوہری ادارے کے بورڈ آف گورنرز سے کسی بھی غلط استعمال یا سیاسی فیصلہ ایران اور آئی اے ای اے کے مابین تعاون کو کمزور کرے گا۔

غریب آبادی نے عالمی جوہری ادارے کے بورڈ آف گورنرز میں کچھ قراردادوں کی منظوری کیلیے تین یورپی ممالک کی کوششوں کا حوالہ دیتے ہوئےکہا کہ جبکہ ایران آئی اے ای اے کے ساتھ وسیع اور تعمیری تعاون کر رہا ہے لیکن اس عالمی ادارے کے ساتھ باہمی تعاون کیلیے ایران سے اپیل کرنے اور ایران کیجانب سے عالمی ایٹمی ایجنسی کی دو درخواستوں پر عمل کرنے کے مقصد سے ایک معاہدے پر دستخط کرنا ایک افسوسناک اور مکمل طور پر غیر تعمیری اقدام ہے۔

انہوں نے یہ قرار داد وہ ممالک کے ذریعہ پیش کی جارہی ہے جن کے پاس یا جوہری ہتھیار موجود ہیں یا وہ اس طرح کے تباہ کن اور مہلک ہتھیاروں کی میزبانی کر رہے ہیں ، اور دوسری طرف ایران کے بارے میں بھی اپنی سیف گارڈ  پریشانیوں کا اظہار کرتے ہیں اور  اسلحے سے پاک ہونے والی حکومتوں کے بین الاقوامی اصولوں اور قوانین کا مذاق اڑا رہے ہیں۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 5 =