15 جون، 2020 5:07 PM
Journalist ID: 1917
News Code: 83822988
0 Persons
ایران میں شام سے متعلق اجلاس کا انعقاد ہوگا: ظریف

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے اپنے ترک صدر کیساتھ مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران کہا ہے کہ مستقبل قریب میں شام سے متعلق آستانہ امن عمل کے فریم ورک کے اندر تہران میں ایک اجلاس کا انعقاد ہوگا۔

ترکی کے دورے پر آئے ہوئے ایرانی وزیر خارجہ نے دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کو تعمیری قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایران اور ترکی کے طبی ٹمییں مل کر کرونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔

انہوں نے دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی لین دین کا سلسلہ جاری رکھنے کیلئے سرحدوں کو کھولنے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ انہوں نے اس حوالے سے اپنے ترک ہم منصب سے بات چیت کی ہے اور ایران اور ترکی کے درمیان ریلوی نیٹ ورکس کے ذریعے تجارتی تعلقات کا سلسلہ جاری ہے۔

ظریف نے ایران مخالف امریکی پابندیوں کی تنقید کرتے ہوئے پابندیوں کے دوران ایران کا ساتھ دینے پر ترکی کا شکریہ ادا کیا۔

انہوں نے کرونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے ترکی کی طبی ٹیموں سے تعاون پر تیاری کا اعلان بھی کردیا۔

ظریف نے کہا کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ نے ثابت کردیا کہ دنیا کے سارے ممالک ایک دوسرے کیساتھ منسلک ہیں اور وہ بڑی طاقتیں جو اپنی طاقت کو یکطرفہ طور پر استعمال کرتی ہیں ان میں اس چھوٹے وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کی طاقت نہیں ہوتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایران اور ترکی کے درمیان پروازوں کی یکم آگوست کی از سرنو بحالی ہوگی۔

ظریف نے کہا کہ فریقین کے درمیان ایران سے ترکی کو نچرل گیس کی برآمدات کیلئے بات چیت ہوئی ہے اور ترک عوام دونوں ملکوں کے معاہدوں کے فریم ورک کے اندر ایرانی گیس سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ان کے ترک ہم منصب سے حالیہ ملاقات میں دونوں ملکوں کی فضائی اور زمینی سرحدوں کو کھولنے پر بات چیت کی گئی ہے اور وہ عنقریب کھل جائیں گی۔

اس کے علاوہ شام، یمن اور افغانستان کی تبدیلیوں پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا اور ترکی، یمن میں قیام امن کی کوشش کر رہا ہے۔

ظریف کا کہنا ہے کہ ترکی یمنی مسئلے کے حل کیلئے سیاسی طریقوں پر زور دیتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ شامی مسئلے کے حل کیلئے آستانہ امن عمل کے فریم روک کے اندر عنقریب ترکی اور روس کے سربراہوں کے درمیان ایک ورچوئل اجلاس کا انعقاد ہوگا اور پھر اس کے بعد تہران میں ان تینوں کے درمیان ملاقات ہوگی۔

انہوں نے اس امید کا اظہار کردیا کہ آستانہ امن عمل، علاقائی مسائل کے حل میں مددگار ثابت ہوگا۔

ظریف نے کہا کہ ترک صدر "رجب طیب اردگان" ایران کا دورہ کریں گے اور اس موقع پر دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی شعبے میں کئی معاہدوں پر دستخط ہوگا۔

انہوں نے کرونا وائرس کیخلاف لڑنے میں امریکی کارکردگی پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ نے اس حوالے سے اپنے نام کو تاریخ کے سیاہ صفحات میں درج کیا ہے۔

واضح رہے کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ میں کمی کے بعد یہ ایرانی وزیر خارجہ کا دوسرا دورہ ترکی ہے۔

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ دورہ ترکی کے اختتام کے بعد روسی دارالحکوکت ماسکو روانہ ہوجائیں گے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 3 =