امریکہ کو قرارداد 2231 کے تحت کسی کام کا آغاز کرنے کا اختیار نہیں ہے: ایران

نیویارک، ارنا- اقوام متحدہ میں تعینات ایران کے مستقل مندوب نے اپنے امریکی ہم منصب کے حالیہ بیانات کو ناصحیح قرار دیتے ہوئے کہا کہ سلامتی کونسل کی قرارداد نمبر 2231 کے تحت امریکہ کو کسی کام کا آغاز کرنے کا اختیار نہیں ہے

 ان خیالات کا اظہار "مجید تخت روانچی" نے ہفتے کے روز ایک ٹوئٹر پیغام میں کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ امریکی سفیر کا اعتقاد ہے کہ امریکہ کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد نمبر 2231 کی حمایت کے تحت ایران کیخلاف پابندیوں کا از سر نو نفاذ کرنے کیلئے جوہری معاہدے میں اختلافات کے حل کا میکنزم جسے سنیپ بیک کہا جاتا ہے، کو استعمال کرنے کا حق ہے۔

تخت روانچی نے کہا کہ لیکن یہ غلط فہمی ہے کیونکہ جب سے امریکہ، صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی ہدایت سے ایران جوہری معاہدے سے علیحدہ ہوگیا تب سے وہ اس معاہدہ کا شراکت دار ہی نہیں ہے۔

ایرانی مندوب نے اس بات پر زور دیا کہ امریکہ نے قرارداد نمبر 2231 کیخلاف ورزی کی ہے اور اسے اس قرارداد کے تحت کسی کام کا آغاز کرنے کا حق نہیں ہے۔

واضح رہے کہ اقوام متحدہ میں تعینات امریکی مستقل مندوب نے جمعہ کے روز ایک پریس کانفرنس کے دوران اس بات کا دعوی کیا کہ جو بھی قرارداد 2231 کے متن کو پڑھ لے وہ یہ سمجھ سکتا ہے کہ امریکہ کو ایران پر اسلحے کی پابندی میں توسیع کیلئے اختلافات کے حل کے میکنزم کو استعمال کرنے کا حق ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایران پر اسلحے کی پابندی کو توسیع دینے کے مسودے کو جرمنی، برطانیہ اور فرانس کیلئے بھیجا گیا ہے اور اسے روس اور ایسٹونیا کیلئے بھیجنے کا امکان بھی ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 2 =