امریکی پابندیوں نے "سی ایف" کے مریضوں کی ادویات کی درآمدات کو روک دیا ہے: ایران

تہران، ارنا – ایرانی وزارت صحت کے ٹرانسپلانٹ اور بیماری کا انتظام سنٹر کے سربراہ نے کہا ہے کہ امریکی ظالمانہ پابندیو نے کے نتیجے میں سی ایف کے مریضوں کے لئے " کروہن" کے نام سے غیرملکی برانڈ دوائی پینکریٹین کی قلت پیدا ہوگئی ہے۔

یہ بات "مہدی شادنوش" نے ہفتہ کے روز ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے کہا کہ ایرانی وزارت صحت کو کروہن کی دوائی کے غیر ملکی برانڈ کی کمی کے لئے کچھ سی ایف کے مریضوں کی شکایات پر تشویش ہے اور اگرچہ اس دوا کی گھریلو قسم مارکیٹ میں دستیاب ہے اور ان مریضوں کے لواحقین کو بلا معاوضہ فراہم کی جاتی ہے لیکن اس دوا کے غیر ملکی برانڈ کی درآمدات کو فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن تنظیم میں جائزہ کیا جاتا ہے۔
اس سے پہلے ایرانی میڈیسن اور فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن کے ماتحت مواد کے منیجر ڈائریکٹر "غلامحسین مہرعلیان" نے کہا تھا کہ ایران مخالف امریکی پابندیوں کے نتیجے میں مالی وسائل اور ادویات کی منتقلی میں سنگین حدود پیدا چکی ہے۔
تفصیلات کے مطابق، سی ایف (سسٹک فائبروسس) معدے کی بیماری ہے اور اس بیماری کا شکار ہونے والے مریض چربی میں گھلنشیل وٹامن جذب کرنے میں ناکامی کی وجہ سے ، روزانہ وٹامن "کا" ، "ڈی" ، "ای" اور "اے"، اس وٹامنز اور معدنیات جذب کرنے کے لئے ہر کھانے میں انزائم "کرونز" کے 4 سے 5 کیپسول کا استعمال کرتے ہیں۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 13 =