ہمیں امید ہے کہ امریکہ غلط اقدام نہیں اٹھائے گا: ایرانی صدر

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر مملکت نے امیر قطر کیساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے کے دوران گفتکو کرتے ہوئے کہا کہ اگر امریکہ کیریبین یا دنیا کے کسی اور کونے میں ایرانی آئل ٹینکروں کی راہ میں رکاوٹیں حائل کرے تو ہم اس کا جوابی کاروائی کریں گے۔

صدر روحانی نے اس بات پر زور دیا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کبھی کسی کشیدگی کا آغاز ہی نہیں کیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر "حسن روحانی" نے آج بروز ہفتے کو "شیخ تمیم بن حمد آل ثانی" سے ایک ٹیلی فونک رابطے کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

اس موقع پر انہوں نے اس امید کا اظہار کردیا کہ دونوں ملکوں کے درمیان مشترکہ اقتصادی کمیشن کے جلد قیام سے تہران- دوحہ کے درمیان تعلقات کا فروغ ہوجائے گا اور ساتھ دونوں ممالک کی بندرگاہوں کے ذریعے سامان کی منتقلی بتدریج شروع کی جائے گی اور دونوں ممالک کی ایئر لائنز کی پروازوں کی از سر نو آغاز ہوگی۔

انہوں نے قطر کیجانب سے 2022ء میں فٹبال ورلڈ کپ کی میزبانی پر تبصرہ کرتے ہوئے اس حوالے سے ایران کیجانب سے ہر کسی تعاون پر آمادگی کا اظہار کردیا اور کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران بنیادی ڈھانچوں اور ضروریات کی فراہمی پر تعاون کیلئے تیار ہے۔

صدر روحانی نے کہا کہ علاقائی امن ایران کیلئے انتہائی اہم ہے کہ اور اس بات کے باوجود کہ امریکہ دنیا کے مختلف حصوں میں اپنے اقدامات کے ذریعے نا قابل قبول صورتحال پیدا کردی ہے لیکن ہم نے کسی بھی صورتحال میں تناؤ اور کشیدگی کا آغاز نہیں کریں گے۔

اس موقع پر امیر قطر نے عیدالفطر کی آمد پر ایرانی حکومت اور عوام کو مبارکباد دیتے ہوئے تمام شعبوں میں باہمی تعلقات پر زوردیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم کسی بھی تناؤ کی مخالفت کرتے ہیں اور تناؤ کو کم کرنے کی پوری کوشش کریں گے

شیخ بن حمد آل ثانی نے اس امید کا اظہار کردیا کہ  دونوں ملکوں کے درمیان مشترکہ اقتصادی کمیشن کے قیام سے باہمی اقتصادی تعلقات میں مزید اضافہ ہوجائے گا

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 11 =