کرونا وائرس کا فلسطین کی آزادی کیلئے عالمی عزم پر اثر نہیں پڑتا

بجنورد، ارنا- ایرانی صوبے شمالی خراسان سے تعلق رکھنے والے دو سنی علماء نے کہا ہے کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی وجہ سے عالمی یوم القدس کی ریلیوں کے عدم انعقاد فلسطین کی آزادی کیلئے عالمی عزم پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔

تفصیلات کے مطابق، علاقے بجنورد کے خاتم الانبیا مسجد کے سنی امام جماعت نے ارنا نمائندے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایرانی مسلم عوام کسی بھی صورتحال میں فلسطینی ارمان کو نہیں بھول جائیں گے۔

یوم قدس جیسے اہم قومی اور مذہبی  تقریبات کے عدم انعقاد کی وجہ سے ہمیں ذرائع ابلاغ کی صلاحیت کو مختلف طبقات خصوصا نوجوانوں میں فلسطینی عوام پر ہونے والے ظلم و ستم سے متعلق آگاہی دینے کیلئے بروئے کار لانا ہوگا۔

مولوی داتا دواری نے کہا کہ در حقیقت ہمیں اس اہم دن جو فلسطین کی آزادی اور اسرائیل کی تباہی کیلئے دنیا کے مسلمانوں کو متحد کرنے کے حوالے سے بانی اسلامی انقلاب امام خمینی (رہ) کی حکمت عملی سے قائم کیا گیا ہے، کو کرونا وائرس جیسے بحرانوں سے فراموش نہیں کیا جانا چاہئے۔

اس کے علاوہ علاقے رازجر گلان کے سنی امام جماعت نے بھی کہا ہے کہ یوم القدس کسی بھی فکر یا گروہ سے قطع نظر دنیا کے آزادی پسندوں سے تعلق رکھتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ غاصب صیہونی ریاست اور اس کے حامیوں کو جانا چاہئے کہ یوم القدس کی ریلیوں کا لوگوں کی صحت کی حفاظت کیلئے انعقاد نہ کرنا، امت مسلمہ کے سب سے اہم مسئلے کو فراموش کرنے کا مطلب نہیں ہے، کیونکہ القدس کی آزادی اور فلسطینی ارمان مسلمانوں اور آزادی پسندوں کے دلوں میں جڑے ہوئے ہیں۔

مولوی "رحیم صمدی" نے مسلمانوں کے نزدیک بیت المقدس کی اہمیت کا ذکر کرتے ہوئے کہا صیہونیت اسلام کیخلاف ایک تحریک ہے جسے امام خمینی نے یوم القدس کے تعین سے اور اس مسئلے کو عربوں کے مسئلے سے اسلامی مسئلے میں تبدیل کرتے ہوئے عالم اسلام سے اسرائیل کے بڑے خطرے کے خلاف متحد ہونے کا مطالبہ کیا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 8 =