القدس کی آزادی کی جد و جہد ایک مذہبی فریضہ ہے: اعرافی

قم، ارنا- قم مذہبی مدارس اور القدس کے بین الاقوامی کانگریس کے صدر نے کہا ہے کہ ہم القدس اور فلسطینیوں کی آزادی کیلئے جدوجہد کو ایک مذہبی، نظریاتی اور اخلاقی فریضہ سمجھتے ہیں اور اگر پوری دنیا اس فریضے کو ترک کردیں پھر بھی اسلامی جمہوریہ اس سے دستبردار نہیں ہوگا۔

ان خیالات کا اظہار آیت اللہ اعرافی نے آج بروز پیر کو القدس کے بین الاقوامی کانگریس کے پہلے ورچوئل اجلاس کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ ہم عالم اسلام کے تمام بھائیوں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ ناجائز صہیونی ریاست کیساتھ تعلقات کو معمول پر لانے اور کسی معاہدے اور ثقافتی اور میڈیا تعاون کے فریم ورک کے اندر صہیونیوں کے زیرانتظام ٹی وی سیریز نشر کرنے سے لے کر صیہونیوں کو صحت سے متعلق تجربات سے فائدہ اٹھانے کے بہانے کے تحت کانفرنسوں میں مدعو کرنے سے گریز کریں۔

اعرافی نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران امریکہ اور ناجائر صہیونی ریاست کیخلاف جنگ کے حوالے سے دنیائے اسلام اور مزاحمتی فرنٹ کے صف اول میں کھڑا ہے اور القدس الشریف اور اسلامی سرزمین کی آزادی پر مزاحمتی فرنٹ کی حمایت کا سلسلہ جاری رکھے گا۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ القدس الشریف سے متعلق بین الاقوامی آن لائن کانفرنس کا قابض صہیونی ریاست کیخلاف مزاحمتی فرنٹ کی حکمت عملی کا جائزہ کے مقصد سے انعقاد کیا جائے گا۔

اس کانفرنس کا 18 اور 19 مئی کو ایران کے مقامی وقت کے مطابق 18 بجے سے لے کر 20 تک انعقاد اور مکہ مکرمہ کے وقت کے مطابق 14:30 بجے سے لے کر 18:30 بجے تک دو دنوں کیلئے انعقاد کیا جائے گا۔

منعقدہ اس کانفرنس میں ایران، پاکستان، عراق، فلسطین، بنگلہ دیش، کینیڈا، تھائی لینڈ، سیرا لیون، بحرین، انڈونیشیا، شام، امریکہ، برطانیہ، لبنان، جنوبی افریقہ، نائیجیریا اور مڈغاسکر سے تعلق رکھنے والے اسپیکر تقریر کریں گے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 12 =