ایران دوسرے ملکوں کو ورچوئل تعلیم سے متعلق تجربات کے تبادلہ پر تیار

تہران، ارنا- ایرانی وزیر تعلیم نے اس عزم کا اعادہ کیا ہے کہ ان کا ملک ورچوئل تعیلم سے متعلق اپنے تجربات کو دیگر ملکوں خاص طور پر اسلامی ممالک سے شیئر کرنے پر تیار ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی دنیا کا تعلیمی، سائنسی اور ثقافتی ادارہ (آیسسکو) مسلم ممالک کا بین الاقوامی تعلیمی اور ثقافتی ادارہ ہے جس کو لازمی طور پر جابرانہ پابندیوں کیخلاف مؤقف اپنانا چاہئے اور ہم درخواست دہندہ ممالک کو ورچوئل ایجوکیشن کی مفت صلاحیت فراہم کرنے کیلئے تیار ہیں۔

 ان خیالات کا اظہار "محسن حاجی میرزائی" نے آج بروز جمعرات کو آیسسکو رکن ممالک کے وزرائے تعلیم کے درمیان "کوویڈ-19 کے بحران کے دوران تعلیمی نظام کی کارکردگی" کے عنوان کے تحت منعقدہ ویڈیو کانفرنس کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

اس اجلاس میں رکن ممالک کے 50 وزرائے تعلیم اور دیگر بین الاقوامی تنظیموں کے نمائندوں نے حصہ لیا۔

اس موقع پر انہوں نے کرونا وائرس کے دوران، تجربات کے تبادلہ اور اس بحران سے نمٹنے کیلئے بین الاقوامی اقدامات اٹھانے میں آیسسکو تنظیم کے کردار کو اہم قرار دے دیا۔ 

حاجی میرزائی نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ نے کرونا وائرس کے دوران تعلیمی سرگرمیوں کا سلسلہ جاری رکھنے کیلئے،اسکولوں کی بندش کے بعد روزانہ 13 گھنٹوں کیلئے ہر کورس اور تعلیمی بنیادوں کیلئے براہ راست ٹیلی ویژن پر تعلیمی پروگرام نشر کرنا شروع کیا۔

انہوں نے کہا کہ ٹیلی ویژن میں فی الحال تعلیمی کورسز 41 پروگراموں کی شکل میں چار ٹی وی چینلز میں نشر کیے جار ہے ہیں۔

ایرانی وزیر تعلیم نے اس بات پر زور دیا کہ اسلامی جمہوریہ ایران ورچوئل تعیلم سے متعلق اپنے تجربات کو دیگر ملکوں خاص طور پر اسلامی ممالک سے شیئر کرنے پر تیار ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
9 + 9 =