ظریف کا اقوام متحدہ کو امریکی وعدوں کی خلاف ورزی کرنے پر انتباہ

نیویارک، ارنا – ایرانی وزیر خارجہ نے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کے نام میں ایک خط میں امریکہ کی جانب سے بین الاقوامی وعدوں کی خلاف ورزیوں اور جوہری معاہدے سے نکلنے کیساتھ سلامتی کونسل کی قرارداد کی خلاف ورزی پر انتباہ کر کے اس عالمی تنظیم کی ساکھ کے تحفظ کو مطالبہ کیا ہے.

محمد جواد ظریف نے جمعہ کے روز انٹنیو گوٹرش کو لکھے گئے ایک مراسلے میں جوہری معاہدے سے امریکہ کے دستبرداری اور ایرانی عوام کے خلاف یکطرفہ پابندیوں کی واپسی سے متعلقہ مسائل کا ذکر کرتے ہوئے ان سے مطالبہ کیا کہ امریکہ کی سنگین اور مسلسل خلاف ورزیوں خاص طور پر اقوام متحدہ کے چارٹر کی شق 25 کے خلاف امریکی خلاف ورزی جس نے اقوام متحدہ کی ساکھ اور سالمیت کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی امن و سلامتی کو خطرے میں ڈال دیا ہے، پر سلامتی کونسل کی توجہ کو راغب کرے.

اس خط میں آیا ہے کہ سب پر یہ واضح ہے کہ یہ امریکہ کے غیر قانونی اقدامات بین الاقوامی قوانین اور اقوام متحدہ کے منشور کی صریح خلاف ورزی ہے۔ تنازعات کے پرامن حل کے اصل کو کمزور بناتے اور کثیرالجہتی اور اس کی تنظیموں کو خطرے میں ڈالتے ہیں۔ اور یہ بات یکطرفہ پن کے تباہ کن اور ناکام دور کی واپسی کی نشاندہی کرتا ہے اور سب بین الاقوامی امن و سلامتی کے لئے واضح خطرہ ہے  اور غیر قانونی اقدامات کی حوصلہ افزائی کا باعث ہے۔

ظریف نے کہا کہ امریکہ نہ صرف جوہری معاہدے کے تحت اپنی ذمہ داریوں کو پورا نہیں کرتا ہے بلکہ اقوام متحدہ کے دیگر ممبروں کے وعدوں کی راہ میں روڑے اٹکا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ  جب سے ٹرمپ انتظامیہ نے اقتدار سنبھالا ہے، امریکہ نے ایک بار پر پھر یکطرفہ سخت اقدامات کا سہارا لے کر ایران پر 129 پابندیاں عائد کردی ہیں۔

ظریف نے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اور ان کے ممبر کو تمام فریقوں کے ذریعہ جوہری معاہدے کے مکمل نفاذ کو یقینی بنانا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ سلامتی کونسل کو امریکہ کی جانب سے اس طرح کے توہین آمیز طریقوں کے دوہرانے پر پریشانی کے بجائے ایرانی عوام کے خلاف غیر قانونی پابندیوں جو قرارداد 2231 کے مخالف ہیں، کے دوبارہ نفاذ کی سختی سے مذمت کرنی چاہئے.

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ امریکہ کو ان نقصانات کی وجہ سے جوابدہ ہونا اور پوری طرح ایرانی عوام پر ہونے والے نقصانات کا ازالہ کرنا چاہیے.

انہوں نے کہا کہ عالمی برادری کو جوہری معاہدے پر عمل درآمد کو یقینی بنانا ہوگا۔

ظریف نے اس مراسلے میں عالمی برادری خاص طور پر سلامتی کونسل اور سکریٹری جنرل سے اپیل کی کہ امریکی کے عزائم جو سلامتی کونسل کی قرار داد 2231  کو نقصان پہنچاتے ہیں، کا مقابلہ کرنے کے لئے مناسب اقدام اٹھا کر کے اقوام متحدہ کو امریکہ کے حالیہ اشتعال انگیز اقدامات کے سامنے اپنی ذمہ داری کو پورا کریں.

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 3 =