ایران 2019 کو آئی اے ای اے  کے معائنوں کو قبول کرنے میں سرفہرست ہے

لندن، ارنا - ویانا کی بین الاقوامی تنظیموں میں تعینات ایرانی مستقل مندوب نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے 2019 میں دنیا بھر میں بین الاقوامی جوہری ادارے کے 21 فیصد معائنوں کو قبول کرنے والے ممالک اور اس کے 60 رکن ممالک کے 90 فیصد سے زیادہ معائنوں کی قبولیت کی فہرست میں ایک بار پھر سرفہرست مقام حاصل کیا۔

یہ بات "کاظم غریب آبادی" نے بدھ کے روز صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران ان 62 ممالک میں شامل ہے جو اضافی پروٹوکول اور حفاظتی معاہدوں پر عمل درآمد کرتے ہیں لیکن اب بھی عالمی جوہری ادارے کے مضامین اور سرگرمیوں کی وسیع پیمانے پر جمع نہیں ہے جس کا ابھی تک اعلان نہیں کیا گیا ہے۔
غریب آبادی نے کہا کہ آئی اے ای اے کے حفاظتی انتظامات کو نافذ کرنے پر موصولہ اطلاعات کی بنیاد پر2019 میں ممبر ممالک کے 466 معائنوں میں سے  432 افراد نے ایران کی نگرانی کی ہیں جو اس کے گروپ میں ہونے والے کل معائنہ کے 92 فیصد  اور عالمی سطح پر 29 فیصد کے برابر ہے ۔
انہوں نے مزید کہا کہ 2019 میں 62 رکنی گروپ میں 45 اضافی رسائوں سے ایران میں 33 رسائیاں کی گئیں جو اس گروپ کے کل رسائی کا 73 فیصد اور دنیا میں 24 فیصد کے برابر ہے۔
انہوں نے ایران کی پرامن جوہری پروگرام میں مکمل شفافیت اور اس معاہدے کے تحت ایجنسی کے معائنہ کے ایک اہم حجم کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یورپ میں عزم کا فقدان اور سلامتی کونسل میں امریکی دیگر تباہ کن اقدامات اور اس کی یک طرفہ علیحدگی ایران کے لئے تعاون ہی واحد آپشن نہیں ہے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 11 =