ایران اور جاپان کا دنیا بھر میں تنازعات کی کمی پر زور

تہران، ارنا – ایرانی صدر مملکت اور جاپانی وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا ہے کہ ایسی صورتحال میں جہاں پوری دنیا میں کرونا وائرس پھیل چکا ہے دنیا بھر میں تنازعات کو کم کرنا چاہئے اور ممالک کے درمیان تعلقات کو انسان دوستانہ تعلقات پر مبنی ہونا ہوگا ۔

ایرانی صدر "حسن روحانی" نے منگل کے روز جاپانی وزیر اعظم "آبے شنزو" کے ساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے میں گفتگو کی۔
انہوں نے دونوں ممالک کے درمیان کرونا وائرس سے نمٹنے اور تجربات کے تبادلے پر زور دیا۔
فریقین نے دو طرفہ تعلقات کو گہرانے پر زور دیا اور اس امید کا اظہار کیا کہ دستخط ہونے والے معاہدوں کے نفاذ کے ساتھ اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو فروغ ملیں گے۔
انہوں نے علاقے اور دنیا میں امن، استحکام اور سلامتی قائم کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ تمام ممالک کے درمیان تعلقات کو انسان دوستانہ تعلقات پر مبنی ہونا چاہیئے۔
صدر روحانی نے جاپان کی انسان دوستانہ امداد کی تعریف کرت ہوئے کہا کہ بدقسمتی سے ، کرونا کے خلاف جنگ کے مشکل حالات اور ساتھ ہی ساتھ اس کے انتہائی سخت معاشی نتائج میں ، ایرانی عوام کے خلاف امریکی غیر قانونی پابندیاں شدت اختیار کر چکی ہیں۔
انہوں نے کہا کہ اس وائرس کو بچانے کا واحد راستہ تمام ممالک کے درمیان باہمی تعاون ہے اور ایران مخالف امریکی ظالمانہ اور غیر انسانی پابندیوں میں اضافے کے بعد ، ہمیں آج طبی سامان اور خوراک کی فراہمی کے میدان میں بھی بہت ساری پریشانیوں کا سامنا ہے۔
ایرانی صدر نے کہا کہ ہمیں افسوس ہے کہ حالیہ ہفتوں میں ہم نے عراق اور خلیج فارس میں امریکی تنازعات دیکھا ہے اور امریکہ ہمیشہ ہی اس خطے میں تنازعات کا آغاز رہا ہے۔
انہوں نے امریکیوں کے اس دعوے جو ایران سے کرونا وائرس سے نمٹنے میں مدد کرنے کے لئے تیار ہیں پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگر امریکی اس صورتحال میں ایماندار ہیں اور اقدامات کرنا چاہتے ہیں تو ، واحد راستہ ایران کی غیر قانونی پابندیوں کا خاتمہ ہے۔
جاپانی وزیر اعظم نے کرونا وائرس قابو پانے اور اس کے نتیجے میں عالمی معاشی بحران کے خاتمے کے لئے باہمی تعاون پر زور دیا اور کہا کہ یہ تشویشناک ہے کہ ہم ابھی بھی مشرق وسطی میں مسلسل تناؤ کا سامنا کررہے ہیں اور خطے میں امن و استحکام قائم کرنے کی ضرورت ہے۔
آبے نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران خطی سلامتی میں اہم کردار ادا کر رہا ہے اور ٹوکیو تہران کے ساتھ باہمی تعاون کو جاری رکھنے کے لئے کوشش کرتا ہے۔
انہوں نے کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے دوران امریکی ظالمانہ پابندیوں کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اس صورتحال میں ، انسان دوستانہ کا عمل تمام ممالک کے ایجنڈے میں ہونا چاہئے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
8 + 7 =