ایرانی سرحدی اہلکاروں کیجانب سے افغان شہریوں پر تشدد اور ڈوبنے کے الزامات مسترد

تہران، ارنا- ایرانی سرحدی فورس نے ایران اور افغانستان کی مشترکہ سرحدوں میں ایرانی اہلکاروں کیجانب سے افغان شہریوں پر تشدد اور ان کو دریا میں ڈوبنے کے الزامات کو یکسر مسترد کردیا۔

تفصیلات کے مطابق، ملک دشمن عناصر اور انقلاب مخالف نٹ ورکس کیجانب سے جاری ویڈیو جس میں ایرانی اہلکاروں کیجانب سے افغان شہریوں کو دریا میں ڈوبنے کا دعوی کیا گیا تھا، کو جلدی سے جائزہ لیا گیا۔

تحقیقات سے انکشاف ہوا ہے کہ ایران اور افغانستان کی سرحد پر اس طرح کا معاملہ سامنے نہیں آیا تھا اور یہ بالکل جھوٹ ہے۔

واضح رہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور افغانستان کے درمیان بہت اچھے تعلقات قائم ہیں اور ایرانی سرحدی اہلکار، سرحدوں کی حفاظت کرتے ہوئے، قانونی آمد و رفت کیلئے داخلے اور خارجی راستوں میں افغان بھائیوں کو خدمات فراہم کرتے ہیں۔

لہذا؛ یہ الزامات زیادہ تر دونوں ممالک کو دور کرنے کی کوششیں ہیں جبکہ دونوں ممالک کی دوستی اور بھائی چارے کی تاریخی ضمانتیں ہیں۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ افغان محکمہ خارجہ کے قائم مقام نے کہا ہے کہ افغانستان کیجانب سے ایک وفد کو چن لیا گیا ہے تا کہ وہ افغان ذرائع ابلاغ کیجانب سے ایران میں مقیم کچھ افغان شہریوں کو مارنے اور ان کو ہریرود دریا کے مضافات میں ڈوبنے کے دعوی کا جائزہ لیں۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 7 =