پمپئو زیادہ سے زیادہ دباؤ ڈالنے کی پالیسی کا شکست کھانے کے بعد جوہری معاہدے میں حصہ لینا چاہتے ہیں: ظریف

تہران، ارنا- ایرانی وزیر خارجہ نے ایران جوہری معاہدے میں دوبارہ حصہ لینے سے متعلق امریکی وزیر خارجہ کے فیصلے کے رد عمل میں کہا ہے کہ یہ فیصلہ زیادہ سے زیادہ دباؤ ڈالنے کی پالیسی کو بُری طرح شکست کھانے کی وجہ سے کیا گیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار "محمد جواد ظریف" نے آج بروز پیر کو ایک ٹوئٹر پیغام میں کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ دوسال پہلے امریکی وزیر خارجہ اور ان کے باس نے جوہری معاہدے میں امریکی شراکت داری کے اختتام کا فیصلہ کیا۔

ظریف نے کہا کہ وہ اس خام خیالی میں تھے کہ ایران کیخلاف زیادہ سے زیادہ دباؤ ڈالنے کے ذریعے ہم ان کے سامنے ہتھیار ڈالیں گے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ان کی اس پالیسی کا بُری طرح شکست کھانے کے بعد اب وہ جوہری معاہدے میں شراکت دار بننے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

انہوں نے امریکی حکام کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ خواب دیکھنے کو چھوڑدیں! ایرانی قوم نے ہمیشہ اپنے مستقبل کا فیصلہ خود ہی کیا۔

نیویارک ٹائمز نے اتوار کی رات (26 اپریل) کو ایران کے اسلحہ کی پابندی میں توسیع کیلئے امریکی چال کا انکشاف کیا تھا ، جسے رواں سال 18 اکتوبر سے جوہری معاہدے کے تحت اٹھایا جائے گا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha