امریکہ کا ایرانی طبی سامان خریدنے کے 90 فیصد لائسنسوں سے انکار

نیویارک، ارنا - گلوبل ریسرچ کے کالم نگار نے ٹرمپ انتظامیہ کے اس دعوے جو پابندیوں سے ایران کی کرونا وائرس سے نمٹنے کی صلاحیت پر کوئی اثر نہیں پڑتا ہے، کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان اطلاعات سے ظاہر ہوتا ہے کہ امریکہ نے ایران کی ادویات اور میڈیکل درآمدات کے لائسنس کی 90 فیصد سے زیادہ درخواستوں کو انکار کردیا ہے۔

یہ بات "ریک استرلینگ" نے پیر کے روز ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے کہا کہ کوئی شک نہیں ہے کہ ایران مخالف امریکی پابندیاں اس ملک کی طبی سامان کی درآمد کرنے کی صلاحیت کو محدود رکھتا ہے۔
استرلینگ نے کہا کہ رپورٹوں کے مطابق، اوفیک (امریکی محکمہ خزانہ کے دفتر برائے غیر ملکی اثاثوں کے کنٹرول) نے اسلامی جمہوریہ ایران کی طبی سامان کی درآمدات کے لئے لائسنس کی 90 فیصد درخواستوں کو مسترد کردیا ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں ایک ایسی معاشی جنگ کا سامنا ہے جس سے اقوام کی خودمختاری کو خطرہ ہے اور اقوام متحدہ کے چارٹر کی خلاف ورزی ہوتی ہے۔
انہوں نے کہا کہ امریکہ کی غنڈہ گردی دن بدن ظاہر ہوتی جارہی ہے، کرونا وائرس کے اس بحران میں تعاون کرنے کے بجائے دوسرے ممالک کی حکومتوں میں مداخلت کرنے اور ان کو خاتمے کے لئے کوشش کر رہا ہے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha