صیہونی بستیوں کی توسیع، صدی ڈیل کے منصوبہ کا تسلسل ہے: ایرانی ترجمان

تہران، ارنا – ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ فلسطین میں بستیوں کی توسیع کیلیے صہیونی کی حالیہ نقل و حرکت اور م اور 1948 کے مقبوضہ علاقوں میں مغربی کنارے کے کچھ حصوں کی شمولیت صدی کی شرمناک ڈیل کے منصوبہ پر عمل درآمد کے مترادف ہے۔

سید عباس موسوی نے فلسطین میں بستیوں کی توسیع کیلیے صہیونی کی حالیہ نقل و حرکت اور م اور 1948 کے مقبوضہ علاقوں میں مغربی کنارے کے کچھ حصوں کی شمولیت کا تسلسل قرار دیتے ہوئے اسرائیل کے اس اقدام کی سخت الفاظ میں مذمت کی۔  

انہوں نے اس طرح کی غیر قانونی کارروائیوں کو بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی اور خطے میں امن و سلامتی کے لئے خطرہ قرار دیا اور اقوام متحدہ اور دیگر بین الاقوامی اداروں سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنے فرائض اور ذمہ داریوں کے مطابق عمل کریں۔

انہوں نے کہا کہ فلسطین کے مظلوم عوام ایک ہی وقت میں کرونا کے علاوہ قبضہ، محاصرے اور پابندیوں جیسے وائرسز سے لڑ رہے ہیں۔

موسوی نے بین الاقوامی تنظیموں کے ساتھ ساتھ دنیا بھر کے ممالک سے بھی مطالبہ کیا کہ وہ فلسطینی عوام کی مدد کریں تاکہ وہ دوبارہ بے گھر نہ ہوئیں۔

انہوں نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ فلسطین کی سرزمین فلسطینی عوام کی ہے صہیونی ایک غاصب ریاست ہے۔

ایرانی ترجمان نے مزید بتایا کہ فلسطینی بحران کا واحد حل اس سرزمین کے باشندوں کے مابین ریفرینڈم کا انعقاد کرنا اور بیت المقدس کو فلسطین کی خودمختار ریاست کی درالحکومت کی حیثیت سے تسلیم کرنا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha