عالمی ادارہ صحت نے ایرانی صحت کے نظام کو طاقتور قرار دے دیا

تہران، ارنا- ایرانی وزیر صحت نے کہا ہے کہ عالمی ادارہ صحت نے طویل عرصے سے ایران کو صحت کے شعبے میں ایک کامیاب ملک کے طور پر تسلیم کیا ہے اور وہ جانتا ہے کہ ہمارے ملک میں پولیو، خسرہ، ملیریا کنٹرول، تشنج اور بہت ساری وبائی بیماریوں کے خاتمے جیسے تجربات ہیں۔

سعید نمکی نے مزید کہا کہ خطے میں ایرانی صحت کا نظام مثالی ہے؛ عالمی ادارہ صحت نے دیکھا کہ گزشتہ سال کے موسم بہار کے دوران، ملک میں سیلاب واقعے کے موقع پر سب، متاثرہ علاقوں میں وبائی امراض پھیلنے کی توقع رکھتے تھے حالانکہ وہاں وبائی مرض کا ایک کیس بھی سامنے نہیں آیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ بلڈ پلیشر کنٹرول کی قومی مہم کے دوران میں ہدف کی تقریبا 75 فیصد آبادی یعنی  3 ملین سے زائد افراد کی اسکریننگ کی گئی۔

نمکی نے کہا کہ عالمی ادارہ صحت ایران کو صحت کے نظام کے میدان میں ایک طاقتور ملک کے طور پر تسلیم کرتا ہے اور کوویڈ-19 بیماری کی روک تھام سے متعلق ایران اور عالمی ادارہ صحت کے ساتھ بہت اچھے قریبی تعلقات ہیں؛ ہم اس حوالے سے اپنی رپورٹز کو مشرقی بحیرہ روم میں عالمی ادارہ صحت کے دفتر سمیت جینوا میں قائم اس تنظیم کے صدر دفتر میں بدستور بھیجتے رہتے ہیں اور ان کیساتھ رابطے میں ہیں۔

انہوں نے کہا کہ خوش قسمتی سے پچھلے کچھ مہینوں کے دوران ہم نے عالمی ادارہ صحت کو کرونا وائرس کیخلاف جنگ میں اپنے تجربات کی رپورٹ دی ہے اور ساتھ ہی ہم اس تنظیم سے موصول ہوئے پروٹوکوزلز کا استعمال کر رہے ہیں۔

نمکی نے کہا کہ نہ صرف ایران، بلکہ دنیا کے تمام ممالک کو اس بیماری سے بخوبی واقفیت حاصل نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس سے بخوبی شناخت حاصل نہیں کی گئی ہے لہذا عالمی ادارہ صحت اور نظام صحت میں دیگر طاقتور ممالک اس سے متعلق پیش گوئی کو صحیح نہیں سمجھتے ہیں؛ شاید اس وائرس دوبارہ ان علاقوں میں واپس لوٹ آئے جہاں اس پر قابو پایا جا چکا تھا لیکن ہمیں امید ہے کہ بہت ہی جلد اس بحران پرغلبہ پا سکیں گے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha