22 اپریل، 2020 7:13 PM
Journalist ID: 1917
News Code: 83761321
0 Persons
صدر روحانی کا ترکی سے باہمی تجارت کے تسلسل پر زور

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر مملکت نے ترکی سے باہمی، علاقائی اور بین الاقوامی تعلقات کے فروغ پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ہمیں صحت کے رہنما خطوط کی مکمل تعمیل کیساتھ باہمی تجارتی تعلقات کا سلسلہ جاری رکھنا ہوگا۔

ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر "حسن روحانی" نے بدھ کے روز اپنے ترک ہم منصب کیساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

اس موقع پر انہوں نے رمضان الکریم کی آمد پر ترکی حکومت اور عوام کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ رمضان المبارک کا مہینے مغفرت اور رحمت کا مہنیے ہے اور ہمیں امید ہے کہ اس مہینے کے دوران، ایران، ترکی اور دنیا کے سارے مسلمانوں کی زندگی خیر و برکت سے مالامال ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس نے بہت سارے ملکوں کو مشکلات میں پھنس دیا ہے اور ایران اور ترکی نے یہ ثابت کر دیا ہے کہ وہ مشکل صورتحال میں ایک دوسرے کیساتھ شانہ بشانہ کھڑے ہیں لہذا اس وقت بھی دونوں ملکوں کو تعاون سے ایک دوسرے کی مدد کرنی ہوگی۔

صدر روحانی نے کوویڈ- 19 کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے ایران کے اچھے تجربات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ہم ترکی سے ان تجربات کو شیئر کرنے پر تیار ہیں۔
انہوں نے صحت کے رہنما خطوط کی مکمل تعمیل سے دونوں ملکوں کی سرحدوں میں تجارتی لین دین کا سلسلہ جاری رکھنے کی ضرورت پر زوردیا۔

انہوں نے اس مشکل صورتحال کے دوران ایران مخالف امریکی پابندیوں کے تسلسل اور ساتھ ہی آئی ایم ایف سے قرضہ لینے کی درخواست سے امریکہ کی مخالفت کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس مشکل صورتحال کے دوران، تمام ممالک کو امریکی غیر انسانی دباؤ کیخلاف واضح موقف اختیار کرنا ہوگا۔

انہوں نے ترکی، روس اور ایران کے سربراہوں کے درمیان آستانہ امن عمل کے فریم روک کے اندر مذاکرات کے تسلسل کی اہمیت کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ہم سب کو شام اور علاقے میں قیام امن و استحکام برقرار کرنے کی کوشش کرنی ہوگی ۔

ایرانی صدر نے اس امید کا اظہار کردیا کہ ان تینوں ممالک کی کوششوں سے علاقے کے تمام ممالک کے درمیان امن و استحکام کا قیام ہوگا۔

 صدر روحانی نے ویڈیو کانفرنس کے ذریعے ایران، روس اور ترکی کے سربراہوں کے درمیان آستانہ امن عمل کے فریم روک کے اندر اجلاس کے انعقاد کے حوالے سے ترک صدر کی تجویز کا خیر مقدم کیا۔

ترکی ایران مخالف امریکی پابندیوں کا بدستور مخالف ہے

در این اثنا ترک صدر "رجب طیب اردگان" نے رمضان الکریم کی آمد پر ایرانی حکومت اور عوام کو مبارکباد دیتے ہوئے اس امید کا اظہار کردیا کہ اس میہنے کی بدولت ساری قوموں کے درمیان امن، صحت اور سلامتی کی فراہمی ہوجائے گی۔

انہوں نے بہت سارے مشکلات کے باوجود کوویڈ-19 کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے ایرانی کوششوں کو سراہتے ہوئے صحت کے رہنما خطوط کی مکمل تعمیل کیساتھ باہمی تجارتی تعلقات کو جاری رکھنے پر زوردیا۔

ترک صدر نے کہا کہ ہم نے ہمیشہ ایران کیخلاف امریکی پابندیوں کی مخالفت کی ہے اور ہمیں امید ہے کہ اس مشکل صورتحال کے دوران بین الاقوامی برداری امریکی غیر قانونی اقدمات کیخلاف ڈٹ کر کھڑے ہوجائے۔

انہوں نے اس نازک صورتحال کے دوران بطور دو دوست اور برادر ملک کے ایک دوسرے کیساتھ کھڑے رہنے اور تعاون سے بحران پر قابو پانے کی ضرورت پر زودیا۔

انہوں نے آستانہ امن عمل کے فریم روک کے اندر ایران، روس اور ترکی کے سربراہوں کے درمیان ویڈیو کانفرنس کے ذریعے اجلاس کے انقعاد کی تجویز دیتے ہوئے آستانہ امن عمل کے فریم ورک میں تینوں ممالک کے معاہدوں پر عمل پیرا ہونے کی اہمیت پر زور دیا اور ساتھ ہی جنگ بندی اور خطے میں پائیدار امن و استحکام کے قیام کی کوشش کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha