امریکی سینیٹر کی ایران کیخلاف ٹرمپ کی پابندیوں پر تنقید

تہران، ارنا - امریکی سینیٹر نے ایران کے خلاف ٹرمپ کی پابندیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے بتایا کہ ان کی پالیسیاں کرونا وائرس کے پھیلنے کی وجہ سے بے گناہ لوگوں کے قتل کا باعث بنیں گی۔

ڈیموکریٹک سینیٹر کریس مورفی نے ٹرمپ کو خبردار کیا کہ اگر ایران کے خلاف اپنی موجودہ پالیسیوں کو جاری رکھے تو وہ کسی حد تک بن بے گناہ لوگوں کی ہلاکت کا ذمہ دار ہوسکتا ہے۔

وہ ان 10 ڈیموکریٹک سینیٹرز میں سے ایک ہیں جنہوں نے گذشتہ ماہ ایک خط لکھا تھا جس میں ٹرمپ انتظامیہ سے اس بات کو یقینی بنانے کا مطالبہ کیا گياتھا کہ ایران اور وینزویلا کرونا وائرس کی وبا کے پھیلاؤ کو روکنے کیلئے طبی سامان اور دیگر انسانی امداد کو درآمد کرسکتے ہیں۔

مورفی نے منگل کے روز صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ فی الحال ، ہماری پابندیاں اس کی اجازت نہیں دیتی ہیں۔ اس بیماری کے پھیلنے کا تسلسل بے گناہ لوگوں کی موت ہوسکتا ہے جس کی ایک وجہ امریکہ کی پالیسی ہے اور یہ امریکی قومی سلامتی کے مفاد میں نہیں ہے ۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس بات کو ذہن میں رکھیں کہ اگر ہم وہاں اس وائرس کو شکست نہ دیں تو ہم اسے یہاں شکست نہیں دے سکتے کیونکہ کرونا کوئی حد نہیں جانتا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ یہ سینیٹر گزشتہ فروری کو میونخ میں سلامتی کانفرنس کے موقع پر ایرانی وزیر خارجہ کے ساتھ ملاقات کی جس کے بعد امریکی صدر ٹرمپ نے ٹویٹ کیا کہ اس ملاقات لوگان قانون کی خلاف ورزی ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha