امریکی سامراج کرونا وائرس سے کہیں زیادہ انسانی معاشرے کو خطرہ میں ڈالتا ہے: صدر روحانی

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر مملکت نے انسانی معاشرے کیلئے امریکی سامراج کو کرونا وائرس سے کہیں زیادہ خطرناک قرار دیتے ہوئے کہا کہ امریکی لالچی اور جابر حکام، آزاد قوموں بشمول ایران اور وینزویلا کیخلاف بدستور دباؤ ڈال رہے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر "حسن روحانی" نے پیر کے روز اپنے وینزویلا کے ہم منصب "نکولس مدورو" کیساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ایران اور وینزویلا نے تعاون کی توسیع اور باہمی یکجہتی سے سالوں سال ہے کہ امریکی پرانے اور حملہ آور وائرس کیخلاف مزاحمت کی ہے۔

 صدر روحانی نے کوویڈ- 19 کیخلاف ایرانی اقدامات اور کامیابیوں جیسے کرونا وائرس کٹس ٹسٹ کی تیاری اور طبی ساز و سامان کی فراہمی پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ہم کرونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے اپنے تجربات کے تبادلہ پر تیار ہیں۔

انہوں نے اویپک پلاس کے اجلاس کے دوران کیے گئے فیصلوں کو مثبت قرار دیتے ہوئے کہا کہ تیل کی پیداوار میں کمی اور تیل مارکیٹ کی قیمتوں میں توازان لانے پر تعاون ناگزیر ہے۔

ایرانی صدر نے اس صورتحال کے دوران، دونوں ملکوں کے درمیان تعاون کے فروغ پر زور دیتے ہوئے اس اقدام کو ایران اور وینزویلا کے مفادات میں قرار دے دیا۔

 صدر روحانی نے مزید کہا کہ تیل پیداوار کے شعبے میں امریکہ کیجانب سے ایران اور وینزویلا کیخلاف لگائی گئی پابندیاں، بین الاقوامی اور انسانی اصولوں کیخلاف ہیں۔

 ایران اور وینزویلا سامراج کیخلاف لڑنے میں ایک دوسرے کیساتھ کھڑے ہیں

در این اثنا وینزویلا کے صدر نے کرونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے ایرانی کوششوں کو سراہتے ہوئے ایرانی حکومت اور عوام سے یکجہتی کا اظہار کردیا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ دونوں ممالک سامراج کیخلاف لڑنے میں ایک دوسرے کیساتھ شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔

انہوں نے دنیا میں کوویڈ- 19 کے پھیلاؤ پر تبصرہ کرتے ہوئے اس وائرس پر قابوپانے کیلئے علاقائی اور بین الاقوامی تعاون پر زور دیا۔

وینزویلا کے صدر نے دونوں ممالک کے وزرائے صحت کے درمیان ویڈیو کانفرنس کے ذریعے کرونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے ایرانی تجربات سے فائدہ اٹھانے کا مطالبہ کیا۔

انہوں نے اویپک پلاس کے حالیہ اجلاس پر تبصرہ کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کردیا کہ اس اجلاس میں کیے گئے فیصلوں پر عمل درآمد سے تیل کی مارکیٹ میں استحکام آئے گا۔

نکولس مدورو نے کہا کہ  امریکہ، بہت ساری کوششوں کے باوجود پھر بھی آزاد قوموں کی ترقی کی روک تھام میں ناکام ہوگیا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha