ایران کا جوہری معاہدے پر یورپ کی ضمانت کی عدم فراہمی کیساتھ یورینیم کی افزودگی کے تسلسل پر زور

تہران، ارنا – ایرانی پارلیمنٹ کی قومی سلامتی اور خارجہ پالیسی کمیٹی کے ترجمان نے جوہری معاہدے کے نفاذ کی رپورٹ پر زور دیا اور کہا ہے کہ اگر یورپی یونین اس معاہدے پر عملی ضمانت فراہم نہ کرے تو ہم عالمی جوہری ادارے کے ساتھ تعاون کی کمی کے علاوہ یورینیم کی افزودگی کو جاری رکھیں گے۔

یہ بات "سید حسین نقوی حسینی" نے بدھ کے روز پارلیمنٹ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے کہا کہ ایران کی ضروریات اور خواہشات کے تناسب سے تیل کی فروخت کو یقینی بنانا تاکہ اس کے تیل کی فروخت میں جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی سے قبل کی مدت میں فروخت سے کمی واقع نہ ہو یعنی روزانہ 26 لاکھ بیرل، یوروپی یونین کو اس بات کو یقینی بنانا چاہئے کہ اسلامی جمہوریہ ایران کو تیل اور دیگر برآمدات سے اپنے زرمبادلہ کے ذخائر تک رسائی اور انتظام کرنے کوئی مشکل کا سامنا نہیں ہوگا۔
حسینی نے کہا کہ اگر یورپ مذکورہ بالا عملی ضمانتوں کی فراہمی سے انکار کرے تو ، اسلامی جمہوریہ ایران کی حکومت متناسب اقدام کے قانون سمیت ایڈیشنل پروٹوکول کے رضاکارانہ نفاذ کی منسوخی کا جائزہ؛ بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کے ساتھ تعاون کو محدود کرنا، جوہری امن سرگرمیوں کی بحالی ، جس میں ملک کی ضروریات کو پورا کرنے والی کسی بھی مقدار اور معیار میں یورینیم کی وسیع افزودگی شامل ہے ، کو بھرپور طریقے سے اور وقت ضائع کیے بغیر جاری رکھے گی۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
9 + 0 =